انتخاب سے قبل یوپی حکومت کے مسلم بورڈزمیں تقرری،اردواکیڈمی،حج کمیٹی،شیعہ سنٹرل وقف بورڈسمیت متعدداداروں میں نامزدگیاں

لکھنؤ:جمعرات کویوپی حکومت کی جانب سے مسلمانوں سے متعلق مختلف بورڈز اور کمیٹیوں میں تقرریاں کی گئی ہیں۔ اگرچہ یہ تقرریاں عام ہیں ، لیکن چونکہ انتخابات قریب ہیں ، حکومت کے ہر فیصلے کو سیاسی عینک سے دیکھا جا رہا ہے۔جمعرات کو یوپی حکومت نے اتر پردیش شیعہ سنٹرل وقف بورڈ ، اتر پردیش اردو اکیڈمی کی عاملہ، اتر پردیش اسٹیٹ حج کمیٹی کی عاملہ، اترپردیش فخر الدین علی احمد میموریل کمیٹی میں تقرریوں کا اعلان کیا ہے۔یوپی حکومت نے وقف بورڈ کے کئی ممبران کو اعزاز سے نوازا ہے۔ اس فہرست میں امروہہ سے محمد زریاب جمال رضوی ، سدھارتھ نگر سے سید شباہت حسین ، لکھنؤ سے سید حسن کوثر کو ممبر بنایا گیا ہے۔ اس کے علاوہ اتر پردیش اردو اکیڈمی کی ایگزیکٹو کمیٹی کا بھی اعلان کیاگیاہے۔ یہاں گورکھپور سے چودھری کفیل کو صدر بنایا گیا ہے۔ ان کے علاوہ سید ندیم اختر ، سید قدرت حسین ، ایم آزاد انصاری ، ڈاکٹر ماہ تلک صدیقی ، راجہ قاسم ، سلیم بیگ ، ڈاکٹر رضوانہ ، ڈاکٹر شاداب عالم ، زیدی ، حاجی ظہیر احمد ، محمد اسلام سلطانی اور نواب قنبرقیصر کوبنایا گیا۔ کافی عرصے کے بعد یوگی حکومت کی طرف سے اترپردیش ریاستی حج کمیٹی کی ایگزیکٹو کمیٹی کا اعلان بھی کیا گیا ہے۔ یوپی حکومت میں وزراء سے لے کر کئی دوسرے سینئر لوگوں کو اس کا حصہ بنایا گیا ہے۔ فہرست کے مطابق محسن رضا ، اسلم بارش ، شوکت علی ، فیصل علی خان ، مولانا حافظ محمد جاوید ، مولانا وقار حیدر ، سرفراز علی ، محمد افتخار حسین ، ڈاکٹر سید احتشام الہدیٰ ، سرور صدیقی ، امان اللہ ، حاجی عبدالرحیم ، وسیم احمد اور سید کلب حسین کو شامل کیا گیا ہے۔ انتخابی جوش و خروش کے درمیان تیزی سے تقرریاںریاستی حکومت نے جمعرات کو اترپردیش فخر الدین علی احمد میموریل کمیٹی کا بھی اعلان کیاہے۔ اس کمیٹی میں چیئرمین سمیت پانچ افراد کے ناموں کا اعلان کیا گیا ہے۔ کمیٹی میں لکھنؤ سے اطہرصغیر زیدی کو چیئرمین بنایا گیا ہے جبکہ الہ آبادسے ڈاکٹر جہاں آرا ، سہارنپور سے محمد انور،خاص گنج سے طارق صدیقی اور دیوریا سے شمس پرویز کو ممبر بنایا گیا ہے۔ انتخابی جوش و خروش کے درمیان اسے بی جے پی کی جانب سے کی جانے والی جلدی تقرریوں کے طور پر دیکھا جا رہا ہے۔

    Leave Your Comment

    Your email address will not be published.*