حکومت کہاں ہے ، ہم تو 7 سالوں سے تلاش کررہے ہیں،سرکارکی پیش کش پرراکیش ٹکیت کاطنز

نئی دہلی:ہندوستانی کسان یونین (بی کے یو)کے قومی ترجمان راکیش ٹکیت نے کہا ہے کہ مرکزی حکومت کو کسانوں کے معاملے پربات کرنی چاہیے۔ انہوں نے کہاہے کہ کسان تحریک کے دوران ہمارے کسان ساتھیوں کی شہادت ہو رہی ہے۔ یہ حکومت کی ذمہ داری ہے۔ جب تاریخ لکھی جائے گی ، تب یہ بھی لکھا جائے گا کہ یہ ’راجہ‘ کے دورمیں ہوا تھا۔ جب ان سے پوچھاگیاکہ آپ کسان پنچایت کے لیے جگہ لینے جارہے ہیں لیکن حکومت سے بات کیوں نہیں کررہے ہیں تو راکیش ٹکیت نے کہا ہے کہ حکومت کہاں ہے؟ ہمیں سات سال سے یہ نہیں مل رہی ہے۔ انہوں نے کہا کہ آپ ہماری حکومت سے بات کرائیں،ہم تیارہیں۔انہوں نے بتایا کہ آدھی شرح پر فصل بیچی جارہی ہے۔ 12 ہزار کروڑگنے کابقایا تاحال باقی ہے۔ انہوں نے کہا کہ ہم تحریک ختم نہیں کررہے ہیں ، ہم زرعی قوانین کے حوالے سے سڑک پر بیٹھے ہیں۔ اس تحریک کو ختم کرنا حکومت کی ذمہ داری ہے۔ لال قلعے پر تشدد کے معاملے میں ملزم دیپ سدھو نے کہا ہے کہ وہ آپ سے ملا ہے ، اس سوال پر راکیش ٹکیت نے کہا کہ میں ان سے کبھی نہیں ملا۔