ہندوستان میں نومبر،دسمبر میں ہی آگیا تھا کورونا وائرس

حیدرآباد:ہندوستانی سائنس دانوں کا اندازہ ہے کہ نومبر دسمبر 2019 سے ہی ہندوستان میں کورونا وائرس کا پھیلنا شروع ہوگیا تھا۔ ہندوستان میں کورونا وائرس کے انڈین اسٹرین کا ایم آر سی اے (موسٹ رسینٹ کامن انسسٹر) 26 نومبر اور 25 دسمبر کے درمیان پیدا ہونے کا امکان ہے ۔یہ حیدرآباد واقع سینٹر برائے سیلولر اور مالکیولر بایولوجی کے سائنسدانوں کی کہنا ہے۔ ملک کے اعلی ریسرچ انسٹی ٹیوٹ کے سائنس دانوں کا اندازہ ہے کہ ووہان سے نکلے کورونا وائرس کے پہلے والا وائرس 11دسمبر 2019تک پھیل رہا تھا۔ ایم آر سی اے نامی ایک تکنیک کا استعمال کرتے ہوئے سائنس دانوں نے اندازہ لگایا ہے کہ تلنگانہ اور ہندوستان کی دیگر ریاستوں میں یہ وائرس پھیل رہا ہے جس کی ابتدا 26 نومبر اور 25 دسمبر کے درمیان ہوئی ہے۔ ہندوستان میں کورونا کا پہلا کیس 30 جنوری کو کیرالا میں درج کیا گیا تھا۔ ایسی صورتحال میں سوال یہ پیدا ہوتا ہے کہ کیا 30 جنوری سے پہلے ہی ہندوستان میں کورونا وائرس نے دستک دی تھی۔ حالانکہ اس کے بارے میں کچھ نہیں کہا جاسکتا کیونکہ اس وقت ملک میں کورونا ٹیسٹ بہت کم ہورہے تھے۔سی سی ایم بی کے سائنسدانوں نے نہ صرف کورونا وائرس کے اوقات کا اندازہ لگایا ہے بلکہ انہیں ایک نئے اسٹرین کا بھی پتہ چلا ہے۔ یہ نئے اسٹرین مہاراشٹر، تلنگانہ، تمل ناڈو، دہلی سمیت پورے ملک میں پھیل رہا ہے۔سی سی ایم بی کے ڈائریکٹر ڈاکٹر راکیش کے مشرا نے کہاکہ ہندوستان میں رپورٹ ہونے والا پہلا کورونا کیس ووہان شہر سے متعلق تھا لیکن حیدرآباد میں پائے جانے والے جس نئے اسٹرین کی تلاش ہوئی ہے اس کا تعلق چین سے نہیں ہے۔ اس وائرس کا تعلق جنوب مشرقی ایشیاء کے کسی ملک سے وابستہ ہے۔

    Leave Your Comment

    Your email address will not be published.*