ہر اسمبلی نشست سے 5000 مسلم ووٹوں کیلئے بی جے پی کا منصوبہ، یو پی انتخابات کیلئے اقلیتی محاذ کی خصوصی حکمت عملی

نئی دہلی:بی جے پی کے قومی اقلیتی محاذ نے یوپی انتخابات کیلئے ایک خاص حکمت عملی بنائی ہے جو اس بات کو یقینی بنائے گی کہ یوپی کی ہر اسمبلی سیٹ پر بی جے پی کو کم از کم 5000 مسلم ووٹ حاصل ہوں، یوپی کی ہر اسمبلی میں مسلم ووٹر ہیں، کہیں 60 فیصد مسلمان ووٹر ہیں اور کہیں کم لیکن ہر سیٹ پر کم از کم 25 ہزار ووٹر ہیں۔بی جے پی اقلیتی مورچہ کے قومی صدر جمال صدیقی نے گفتگو کرتے ہوئے کہا کہ ہم 50 مضبوط مورچہ کارکنان کو یوپی کی تمام 403 اسمبلی نشستوں پر تربیت دیں گے ۔ ایک کارکن کو پارٹی کے حق میں 100 ووٹ ڈلوانے کی ذمہ داری ہوگی۔ اس طرح اقلیتی محاذ ہر ایک سیٹ پر 5000 مسلم ووٹوں کی ذمہ داری لے رہا ہے۔ انہوں نے کہا کہ یوپی کی ہر سیٹ پر کم از کم 25 ہزار مسلم ووٹر ہیں۔صدیقی نے کہا کہ کارکنان کو اس کے لیے دور جانے کی ضرورت بھی نہیں ہے۔ اگر کوئی کارکن اپنے اردگرد محض بیس گھروں میں جاتا ہے اور وہاں بات کرتا ہے تو 100 ووٹ کو یقینی بنایا جاسکے گا، جس میں سے بہت سے اس کے رشتہ دار میں آئیں گے۔ انہوں نے کہا کہ ایسی کئی نشستیں ہیں جہاں بی جے پی کو 5 ہزار سے کم ووٹوں سے شکست ہوئی ہے۔پچھلے اسمبلی انتخابات میں بی جے پی نے ایک بھی مسلمان کو اپنا امیدوار نہیں بنایا لیکن اب بی جے پی اقلیتی محاذ کوشش کر رہا ہے کہ زیادہ مسلم امیدوار ہوں۔ جمال صدیقی نے کہا کہ ہم نے یوپی کی 50 نشستوں کی نشاندہی کی ہے جہاں 60 فیصد مسلم ووٹر ہیں، ہم ان نشستوں کو انتخابات کے لیے تیار کر رہے ہیں، ہماری کوشش ہے کہ مسلم معاشرے کو زیادہ امیدواری حاصل ہو۔ صدیقی نے کہا کہ ہمارا نعرہ ہے ’جو بھی الیکشن لڑے گا وہ آگے بڑھے گا‘۔