ہر ایک کو مساوی حقوق ملنی چاہیے، مذہب کی بنیاد پر کوئی پیچھے نہ رہے:وزیر اعظم

اے ایم یو کے صد سالہ پروگرام سے وزیر اعظم نریندر مودی کا خطاب

علی گڑھ:علی گڑھ مسلم یونیورسٹی (اے ایم یو)کے صد سالہ پروگرام کو ویڈیو کانفرنسنگ کے ذریعے وزیر اعظم نریندر مودی نے خطاب کیا۔ 56 سالوں میں مودی لال بہادر شاستری کے بعد اے ایم یو میں تقریر کرنے والے دوسرے وزیراعظم ہیں۔مودی نے اپنی تقریر میں یونیورسٹی کی تاریخ ، سابق طلباء ، تحقیق اور خواتین کی تعلیم کے بارے میں بات کرتے ہوئے سیکولرازم پر بھی تبادلہ خیال کیا۔ اورسیکولرزم کے اصولوں پرپوراخطاب کیا۔اے ایم یو،تنگ نظرعناصرکے نشانے پررہی ہے۔وزیراعظم کے خطاب کے بعدیقینی طورپران عناصرکی زبان بندہوگی جواسے مذہبی بنیادپرنشانہ بناتے رہتے ہیں۔وزیراعظم نے کہاہے کہ ہم کس مذہب میں پروان چڑھے ہیں ، اس سے زیادہ اہم بات یہ ہے کہ ہمیں ملک کی امنگوں میں کس طرح شامل ہوناچاہیے۔ اختلافات کے نام پر بہت وقت گزر چکا ہے۔ مل کر ہمیں ایک نیاخود کفیل ہندوستان بناناہے۔اردوکے ساتھ ہندی انگریزی اور بہت سی زبانیں پڑھائی جاتی ہیں۔ قرآن مجید کے ساتھ گیتا اور دنیا کے متعددمتون بھی موجود ہیں۔وزیراعظم نے کہاہے کہ اے ایم یو کے کیمپس میں بہترین جذبے کو مضبوط بنانے کے لیے کام کرنا چاہیے۔ یہاں اردو ، عربی اور فارسی زبان پر کی جانے والی تحقیق ہندوستان کی ثقافت کو نئی توانائی بخشتی ہے۔ یہ اے ایم یوکی ذمہ داری ہے ۔انسٹی ٹیوٹ کی دوہری ذمہ داری عائد ہوتی ہے۔ اے ایم یو سے وابستہ ہر فرد اپنے فرائض کو مدنظر رکھتے ہوئے آگے بڑھے گا۔سرسید نے کہا تھا کہ ملک کی دیکھ بھال کرنے والے لوگوں کا سب سے بڑا فرض ان کے مذہب ، ذات پات کے قطع نظر ، لوگوں کے لیے کام کرنا ہے۔ جس طرح ہر زندگی کے لیے انسانی اعضاء کے لیے صحت مند ہونا ضروری ہے اسی طرح معاشرے کی ترقی بھی ہر سطح پر ضروری ہے۔ ملک بھی اسی راہ پر گامزن ہے۔ ہم اس راہ پر گامزن ہیں کہ کسی کو مذہب کی وجہ سے پیچھے نہیں چھوڑناچاہیے۔ سب کاساتھ سب کاوکاس اورسب کاوشواس ضروری ہے۔
انھوں نے کہاہے کہ نئی تعلیمی پالیسی میں طلبہ کی ضروریات کو مدنظر رکھا گیا ہے۔ آج کانوجوان نئی چیلنجوں کا حل تلاش کر رہا ہے۔ قومی تعلیمی پالیسی میں نوجوانوں کی اس خواہش کو فوقیت دی گئی ہے۔ اب طلباکواپنافیصلہ لینے کی آزادی ہوگی۔ 2014 میں 16 آئی آئی ٹی تھے ، اب 23 ہیں۔ 2014 میں 13 آئی آئی ایم تھے ، آج 20 ہیں۔ 6 سال پہلے تک ملک میں صرف 7 ایمس تھے ، آج 22 ہیں۔ تعلیم سب تک یکساں طور پر پہنچی ، یہی وہ کام ہے جس کے لیے ہم کام کر رہے ہیں۔وزیراعظم نے کہاہے کہ مجھے نوجوانوں سے کچھ توقعات ہیں۔ انہیں آزادی کے مجاہدین تلاش کرنے اورلانے کامنصوبہ بناناچاہیے جنہوں نے ابھی تک اس کے بارے میں زیادہ نہیں سنا ہے۔ اگر ہمیں خود کفیل ہندوستان کو مضبوط بنانے کے لیے اے ایم یو کی طرف سے تجاویز ملیں تو کچھ بھی بہتر وگا۔ ہم کہاں پیدا ہوئے اور کس کنبے سے ، کس مذہب میں پروان چڑھے،اس سے بڑی بات ہے کہ اس کی خواہشات کو ملک سے کس طرح جوڑا جاناچاہیے۔ نظریاتی اختلافات ہیں ، لیکن جب ملک کے مقاصد کو حاصل کرنے کی بات آتی ہے تو پھر سب کو ایک طرف رہنا چاہیے۔وزیراعظم نے کہاہے کہ ہمیں مشترکہ زمین پر کام کرنا ہے۔ اس سے تمام 130 کروڑ شہریوں کو فائدہ ہوگا۔ نوجوان یہ کام کرسکتے ہیں۔ ہمیں یہ سمجھنا ہوگا کہ سیاست معاشرے کا ایک اہم حصہ ہے ، لیکن معاشرے میں اس سے بھی زیادہ اہم مسائل ہیں۔ سیاست سے ملک بہت اوپرہوتاہے۔ ایک اورمعاشرہ ہے۔ اگر ہم کسی بڑے مقصدکے لیے اکٹھے ہوجائیں تو کچھ لوگ پریشان ہوسکتے ہیں۔ وہ اپنی خود غرضی کو ثابت کرنے کے لیے جوڑ توڑ کا سہارا لیں گے۔ سیاست – انتظار کراسکتی ہے ، ترقی کا انتظار نہیں ہوسکتا۔مودی نے کہاہے کہ اے ایم یو میں مسلم لڑکیوں کی تعداد بڑھ کر 35فی صدہوگئی ہے۔ صنف کی بنیاد پر امتیازی سلوک نہیں ہوناچاہیے،ہر ایک کو مساوی حقوق ملنے چاہئیں۔ یہ اے ایم یوکے بانی کی وراثت ۔پہلے کہا جاتا تھا کہ اگر عورت تعلیم یافتہ ہے تو کنبہ تعلیم یافتہ ہوجاتی ہے۔ اس سے خاندانی تعلیم پر بھی گہری مضمرات ہیں۔ خواتین کو تعلیم دینی ہوگی تاکہ وہ اپنے مستقبل کو محفوظ بنا سکیں۔ معاشی آزادی سے تقویت ملتی ہے۔ بیٹیوں کو زیادہ سے زیادہ اعلیٰ تعلیم دینا ضروری ہے۔ایک وقت تھا جب ملک میں مسلم بیٹیوں کی ڈراپ آؤٹ شرح (تعلیم چھوڑنے کی شرح) 70فی صدسے زیادہ تھی۔ یہ صورتحال 70 سال تک یکساں رہی۔سوچھ بھارت مشن کا آغاز ہوا۔ حکومت نے مشن موڈ پر بیت الخلاء تعمیرکیں۔ ڈراپ آئوٹ جو70فی صد تھا ، اب 30 پرکھڑا ہے۔ پہلے مسلمان بیٹیاں بیت الخلا کی کمی کی وجہ سے تعلیم چھوڑتی تھیں ، اب ایسانہیں ہو رہاہے۔مودی نے کہاہے کہ کورونا دور میں 80 کروڑ لوگوں کو بلا امتیاز کھانا دیا گیا۔ آیوشمان اسکیم بغیر کسی امتیاز کے شروع ہوئی۔ ایک سابق طالب علم نے بتایا کہ ملک میں 100 ملین بیت الخلاء سے فائدہ ہوا۔ یہ بیت الخلا بنا کسی امتیاز کے تعمیر کیے گئے تھے۔وزیراعظم نے کہاہے کہ100 سال کی تاریخ میں ، اے ایم یو نے بہت سارے لوگوں کو تیار کیا ، لوگوں کو نئی سوچ دی ہے۔اگرمیں تمام لوگوں کے نام لوں تو وقت بہت کم ہوگا۔ اے ایم یو کی خصوصیت وہ اہمیت رہی ہے جہاں سرسید احمد خان نے یونیورسٹی قائم کی تھی۔ابھی کچھ دن پہلے ہی ، مجھے چانسلر سیدنا صاحب کی طرف سے یہ خط موصول ہوا۔ انہوں نے ویکسینیشن کی حمایت کرنے کی بات کی۔ اس طرح کے خیالات کے ساتھ ، ہمیں کورونا جیسی وبا کا سامنا ہے۔ لوگ کہتے ہیں کہ اے ایم یو شہر کی طرح ہے۔ منی انڈیا بہت سے محکموں اور لاکھوں طلباء کے درمیان نظر آتا ہے۔