حلقۂ ارباب ذوق کراچی کی ہفتہ وار آن لائن تنقیدی نشست

حلقۂ ارباب ذوق کراچی کی ہفتہ وار آن لائن تنقیدی نشست
کراچی؍نئی دہلی:حلقہ ارباب ذوق کراچی کی ہفتہ وار آن لائن تنقیدی نشست بذریعہ زوم منعقد ہوئی جس کی صدارت ہندوستان کے معروف شاعر و ادیب پرویزشہریار نے کی جبکہ مہمان خصوصی ڈاکٹر مہر زیدی تھیں۔ نظامت اینجلا ہمیش کی۔مسعودقمر نے اپنا نثر پارہ ’مٹھائی کا پھندہ‘ سنایا جس پر تمام حاضرین نے مدلل انداز میں روشنی ڈالی۔ اسپین سے شریک فیاض عالم سے گفتگو کا آغاز ہوا جنہوں نے اس افسانہ کی کئی جہات پر گفتگو کی اینجلا ہمیش نے اسے شہکار افسانہ قرار دیا دیگر تبصرہ نگاروں میں مہ جبیں آصف نے اسے روایتی بندشوں میں بندھے معاشرے کے دو کردار جو ہمہ وقت ساتھ رہنے کے باوجود ایک دوسرے کی محبت بر قت محسوس نہ کرسکے۔محمد اعظم نے اپنے ایک جملہ سے افسانہ پر بھرپور تبصرہ کا حق ادا کیا۔غزالہ محسن نے بھی اسے عمدہ کاوش قرار دیا۔ مہر زیدی نے افسانے کو منفرد اچھوتے طرز کی تحریر قرار دیا۔ اینجلا ہمیش دوران نظامت افسانے کی کئی جہات پر گفتگو کرتی نظر آئیں ۔زیب اذکار نے فنی لحاظ سے پختہ کارتحریر کے بعد کچھ الفاظ کی اصلاح کے لیے تجاویز دیں ۔ڈاکٹر پرویز شہریار نے اسے عمدہ تحریر قرار دیا۔ تقریب کا دوسرا حصہ نظم کی ترسیل تھی۔ غزالہ محسن رضوی نے اپنی نظم’ریپ‘تنقید کے لیے پیش کی جس پرتمام شرکاء نے بھرپور گفتگو کی۔اسے موجودہ عہد کا المیہ بتایا۔آخر میں جناب صدر نے اسے بلیغ نظم قراردیتے ہوئے موجودہ دور کی عورت کے نسائی جذبات کی توہین کے سلسلے میں گفتگوکی۔ تقریب کا اختتام زیب اذکارصاحب کے بھرپور تبصرہ تمام شرکاء کے فردا فردا شکریہ پر ہوا۔ یوں ایک کامیاب تقریب اپنے اختتام کوپہنچی۔