گوپی ناتھ منڈے ہوتے توبی جے پی ،شیوسینااتحادبرقرارہتا:سنجے راوت

نئی دہلی:اتوار کو گوپی ناتھ منڈے کو ان کے یوم پیدائش پر یاد کرتے ہوئے سنجے راوت نے بی جے پی پر نشانہ لگاتے ہوئے کہا کہ وہ بی جے پی میں کوئی ایسا لیڈر نہیں دیکھتے جو آنجہانی لیڈر کی طرح بات چیت کر سکے، ریاست کی سیاست کو جانتا ہو یا شیو سینا کو سمجھ سکتا ہو۔سنجے راوت نے یہ بھی کہاہے کہ منڈے نے آخر تک کوشش کی کہ شیوسینا-بی جے پی اتحاد برقرار رہے۔ اگر بی جے پی لیڈر (منڈے) زندہ ہوتے تو ریاست کی سیاست مختلف ہوتی۔ منڈے مہاراشٹر کے مقبول لیڈر تھے اور ہم نے 25 سے 30 سال تک ایک ساتھ کام کیاہے۔سنجے راوت نے شردپوار کی سالگرہ کے موقع پر این سی پی سپریمو شرد پوار کی بھی تعریف کی ہے اور کہا کہ ریاست میں مہا وکاس اگھاڑی حکومت پوار کی قیادت اور رہنمائی میں کامیاب رہی ہے۔شیوسینا لیڈر سنجے راوت پانچ دن پہلے راہل گاندھی کی رہائش گاہ پہنچے اور ان سے بات کی۔ اس بات چیت کے بعد انہوں نے کہا کہ راہل گاندھی سے سیاسی بات چیت ہوئی ہے۔ پیغام یہ ہے کہ سب کچھ ٹھیک ہے۔انھوں نے کہاہے کہ راہل گاندھی کے ساتھ جو کچھ ہوا، میں سی ایم ادھو کو بتاؤں گا۔ اپوزیشن کے اتحاد پر بات ہوئی۔ ہم پہلے ہی کہہ چکے ہیں کہ اگر اپوزیشن کا محاذ بنتا ہے تو کانگریس کے بغیر یہ ممکن نہیں ہے، اس پر ضرور بحث ہوئی ہے۔ راہل گاندھی ممبئی آنے والے ہیں۔ ان کاپروگرام جلد آنے والاہے۔میرے خیال میں زیادہ بات کرنا مناسب نہیں۔