شعبۂ اردو، گوینکا کالج میں صابر رضا رہبر کے اعزاز میں محفلِ مشاعرہ کا انعقاد

سیتامڑھی:سیتامڑھی شہر کے قلب میں واقع شری رادھا کرشن گوینکا کالج کے شعبہ اردو میں کل شام محمد صابر رضا رہبرؔکے اعزاز میں مشاعرہ منعقد ہوا جس میں کالج کے اساتذہ ،طلبا و طالبات اور شہرکے ادب نواز اور محبین اردو کثیر تعداد میں شریک ہوئے۔شعبہ اردو کے صدر پروفیسر محمد ثناء اللہ نے اپنے تعارفی خطبہ میں مہمان شعرا کا شعبہ میں استقبال کیا اور کہا کہ کسی بھی زبان کا کوئی دھرم نہیں ہوتا ،زبان کا تعلق کسی مخصوص مذہب سے نہیں بلکہ مخصوص علاقے سے ہوتا ہے ہاں یہ اور بات ہے کہ ہر دھرم دعوت وتبلیغ کے غرض سے اپنے لیے کوئی زبان مختص کر لیتا ہے۔مشاعرے کا آغازنئے لب و لہجہ کاشاعر اور نئی نسل کا ترجمان امام الدین امامؔ مظفرپوری نے اپنے کلام کو مترنم آواز میںپیش کر کے کیاجسے سامعین نے خوب سراہا۔ غزل کے مخصوص اسلوب و بیان اور نوجوان نسل کے نمائندہ شاعر جناب محمد شمیم قاسمی نے اپنی پر جوش غزلوں سے محفل مشاعرہ میں جان ڈال دی ۔بہار اردو اسٹیٹ ٹیچرس ایسو سی ایشن کے صدرجناب قمر مصباحی نے اپنے والہانہ انداز سے سامعین کو اپنی طرف متوجہ کیا اور خوب دادو تحسین وصول کی۔آخر میں مشاعرے کے مہمان اعزازی جناب صابر رضا رہبرؔ نے بے حد سنجیدگی کے ساتھ اپنی کئی غزلیںپیش کیں۔ نظامت کے فرائض جناب سجاد اطہرنے بخوبی انجام دیے۔شرکائے مشاعرہ میں پروفیسرشیام کشور (صدر شعبہ تاریخ)پروفیسرجگجیون پرساد،رینو ٹھاکر(شعبۂ انگلش)پروفیسر روی پاٹھک،پروفیسروید پرکاش دوبے، پروفیسر امرت لال،پروفیسر مکیش کمار(شعبۂ سائنس)پروفیسرکریتکا ورما،پروفیسرکلیانی(شعبۂ کامرس)پروفیسر ششی کانت پانڈے، پروفیسر آنند کمارپرساد(شعبۂ سماجی علوم)پروفیسر شری کانت لکچھمن راو آرلے ،پروفیسر اندر بھوشن،پروفیسر راکیش کمار(شعبہ ہندی )قابل ذکر ہیں۔پروفیسر شیام کیشور،پروفیسر شری کانت آرلے اور ڈاکٹر اندر بھوشن نے اپنی تقریر میں اردو ہندی کے باہمی رشتے کو تفصیل سے بتایا اوراردو سے اپنی والہانہ و جذباتی وابستگی کا اظہار کیا۔مشاعرے کے انتظامی امور کو محمد امجد رضا امجدی اورصدام حسین نے بحسن و خوبی انجام دیا ۔