گلیشئر ٹوٹنے پر اومابھارتی کا اظہار افسوس،مودی سرکار کے پاور پروجیکٹ پر تنقید

نئی دہلی:بی جے پی لیڈر اوما بھارتی نے کہا کہ گلیشیر کے ٹوٹنے سے ہونے والا سانحہ تشویشناک ہونے کے ساتھ ساتھ ایک انتباہی امر ہے۔ساتھ ہی انہوں نے کہا کہ بطور وزیر وہ گنگا اور اس کی اہم ندیوں پر پاورپروجیکٹ بنانے کے خلاف ہیں۔ انہوں نے آفت سے متاثرہ آس پاس کے اضلاع کی عوام کو بھی خدمت کے کاموں میں مشغول ہونے کی اپیل کی۔اوما بھارتی وزیر اعظم نریندر مودی کی سربراہی میں قومی جمہوری اتحاد (این ڈی اے) 1 حکومت میں آبی وسائل اور گنگا تحفظ کی وزیر تھیں۔ ہندی میں ٹویٹس کی ایک سیریز میں انہوں نے کہا کہ گلیشیر ٹوٹنے سے پن بجلی پروجیکٹ کو نقصان پہنچا ہے اور ایک خوفناک سانحہ ہوا ہے۔ انہوں نے کہا کہ ہمالیہ کی بابا سی گنگا ایک تشویش کے ساتھ ساتھ ایک المیہ بھی ہے۔انہوں نے لکھاکہ اس سلسلے میں ہمالیان اتراکھنڈ کے ڈیموں کولے کر میری وزارت کی طرف سے اپنے حلف نامے میں درخواست کی گئی تھی کہ ہمالیہ ایک بہت ہی حساس جگہ ہے، اس لیے گنگا اور اس کی اہم ندیوں پر پن بجلی منصوبہ نہیں بنایا جانا چاہیے۔انہوں نے کہا کہ ان کے فیصلے کے ساتھ ہی بجلی کی فراہمی میں کمی کو قومی گرڈ کے ذریعے بھی پورا کیا جاسکتا تھا۔بھارتی نے بتایا کہ وہ ہفتے کے روز اترکاشی میں تھی اور اب ہریدوار میں ہے۔ اتوار کے روز اتراکھنڈ کے چمولی ضلع کے جوشی مٹھ میں نندا دیوی گلیشیر ٹوٹنے کے سبب دھولی گنگا ندی میں سیلاب آگیا۔ انہوں نے کہاکہ مجھے اس حادثے سے شدید رنج ہے۔ اتراکھنڈ دیوکی زمین ہے۔ وہاں کے لوگ بہت مشکلات سے گذار رہے ہیں اور تبت کے ساتھ سرحدوں کی حفاظت کے لئے محتاط ہیں، میں خدا سے دعا کرتا ہوں کہ وہ ان سب کی حفاظت کرے۔ط