20 C
نئی دہلی
Image default
ادبیات غزل

غزل

قمرعباس قمر
یہ رت عزا کی ہے شہرِ حزیں سے گزرے گا
لٹے ہوؤں کا قبیلہ یہیں سے گزرے گا
مجھے بچالے مرے یار سوز امشب سے
کہ اک ستارۂ وحشت جبیں سے گزرے گا
تمام سنگ بدستوں میں میرا شیشۂ دل
خبر نہیں تھی کہ اتنے یقیں سے گزرےگا
زمینِ تنگ سے ہفت آسماں کی وسعت تک
میں ڈھونڈ لاؤں گا تجھ کو کہیں سے گزرے گا
دیارِ غیر ادھر آکے اس کی وسعت ناپ
اک آسمان مری سرزمیں سے گزرے گا
جو ایک بار تری راہ سے گزر جائے
پھر اس کی ضد ہے دوبارہ وہیں سے گزرے گا

متعلقہ خبریں

Leave a Comment