ڈی یو نے ریسرچ اسکالرز اور اساتذہ کے لیے مزید 4لائبریریاں کھول دیں

ممبئی:دہلی یونیورسٹی (ڈی یو) نے ریسرچ اسکالرزاور فیکلٹی ممبروں کو اپنے کیمپس میں واقع مزید چار لائبریریوں کو استعمال کرنے کی اجازت دے دی ہے۔ ڈی یو کورونا کے درمیان مرحلہ وار اپنا کیمپس کھول رہا ہے۔ یونیورسٹی نے گذشتہ ماہ ’سنٹرل لائبریری‘ کے استعمال کی اجازت دے دی تھی۔ اس کے بعد پیر کے روز پی ایچ ڈی / ایم فل طلباء اور فیکلٹی ممبران کو سنٹرل سائنس لائبریری ، رتن ٹاٹا لائبریری ، جنوبی دہلی کیمپس لائبریری اور لاء فیکلٹی لائبریری استعمال کرنے کی اجازت دی گئی۔ ڈی یو نے بتایا کہ لائبریری آنے سے پہلے محققین اور فیکلٹی ممبروں کو اندراج کروانا ہوگا۔یونیورسٹی نے ایک نوٹس میں کہا کہ دہلی یونیورسٹی لائبریری نظام (ڈی یو ایل ایس ) کے تحت لائبریری کی سہولیات مرحلہ وار دستیاب ہوں گی۔ پہلے مرحلے میں صرف فیکلٹی ممبر ، پی ایچ ڈی / ایم فل محققین کو لائبریری کی سہولت استعمال کرنے کی اجازت ہوگی۔ ریڈنگ روم کی سہولت پیر سے جمعہ صبح 10 بجے سے شام 4 بجے تک دستیاب ہوگی۔محققین لائبریری آنے سے پہلے ای میل کے ذریعہ لائبریرین سے اجازت لینے ہوگی ۔ نوٹس میں کہا گیا ہے کہ سنٹرل لائبریری کے لیے ریسرچ فلور پر تمام ریڈنگ روم اور گراؤنڈ فلور پر تین کمرے ممبران کے لیے دستیاب ہوں گے جبکہ سنٹرل سائنس لائبریری کے لیے پہلی منزل پر دو ریڈنگ روم دستیاب ہوں گے۔ دہلی اسکول آف اکنامکس میں واقع رتن ٹاٹا لائبریری میں گراؤنڈ فلور پر واقع ریڈنگ روم اور پہلی منزل پر واقع میگزین سیکشن کھلا رہے گا۔ نوٹس میں کہا گیا ہے کہ جنوبی دہلی کیمپس لائبریری کی تمام منزلیں محققین کے لیےدستیاب ہوں گی ، جبکہ فیکلٹی لائبریری میں زیریں منزل اور پہلی منزل پر واقع ریڈنگ ہال لوگوں کے لیے دستیاب ہوگا۔ لائبریری اپنے ممبروں کو کتاب لینے اور واپس کرنے کی اجازت دے گی اور کورونا وبا کی مدت کے دوران اس کتاب کی دیر سے واپسی کرنے پر کوئی معاوضہ نہیں ہوگا۔ یونیورسٹی نے کتابوں کی نگرانی کرنے والے اپنے ممبران کو دستانے پہننے کا مشورہ دیا ہے-