دیوبند میں’’نبی رحمتؐ‘‘مہم کے تحت خواتین کی میٹنگ،فرانسیسی مصنوعات کے بائیکاٹ کا اعلان

دیوبند:(پریس ریلیز)نبی کریم ﷺ تمام دنیا کے لیے  رحمت بناکر بھیجے گئے ہیں آپ کی تعلیمات سے ہی دنیا میں امن وامان اور انصاف قائم ہوسکتی ہے،معاشرتی ،اخلاقی اور معاشی اصول جو آپ ﷺ نے بتائے ہیں اگر ان پر عمل کیا جائے تو آج دنیا کے بہت سے مسائل بحسن وخوبی حل ہوسکتے ہیں ان خیالات کا اظہار ’’نبی رحمت ‘‘کمپین کے تحت محلہ بڑضیاء الحق نزد ایچ اے وی انٹر کالج میں منعقدہ خواتین کی میٹنگ میں معہد عائشہ الصدیقہ قاسم العلوم للبنات دیوبند کی فاضلہ محترمہ شاہینہ مریم نے کیا انہوں نے کہا آپ ﷺ کی عالی مرتبت شخصیت تمام دنیا کے لوگوں سے زیادہ معزز اور محترم ہے آپ کے اخلاق حسنہ کی گواہی دشمنان اسلام بھی دیتے ہیں آپ نے کبھی کسی دشمن سے کوئی انتقام نہیں لیا نہ ہی کبھی کسی کا برا چاہا آپ کے اخلاق حسنہ اور کمالات عالیہ کا بیان ابوسفیان دشمن ملک کے سربراہ کے سامنے بھی کرتا ہے ۔انہوں نے آپ ﷺ کی صفت رحمت کا تذکرہ کرتے ہوئے کہا کہ آپ نے تو گالیاں کھاکر بھی دعائیں دی ہے ،دشمنوں کو معاف کیا ہے ،فتح مکہ کے موقع پر فرمایا کہ آج رحمت کا دن ہے ۔خواتین سے گفتگو کرتے ہوے ماریہ عرفان نے کہا کہ اسلام دشمن عناصر ہمیشہ سے نبی کریم ﷺ کی شان میں گستاخی کرتے آئے ہیں ہماری ذمہ داری ہے کہ ہم دنیا کو یہ بتائیں کہ نبی کریم ﷺ کی ذات ہمارے لے کتنی مقدس اور محترم ہے ،تاکہ مغرب میں موجود سیکولر افراد سمجھ سکیں کہ کسی کی دل آزاری آزادایٔ اظہار رائے نہیں ہوتی ۔انہوں نے مزید کہا کہ مغربی مفکرین اور متعصب مؤرخین نے ہمیشہ نبی کریم ﷺ کی ذات اقدس پر کیچڑ اچھالنے کی کوشش کی وہ ہمارے دلوں سے نبی کریم ﷺ کی عظمت اور توقیر کو کم کرنا چاہتے ہیں جبکہ تاریخ گواہ ہے کہ مسلمان کسی بھی درجہ کا وہ نبی کریم ﷺ سے اپنے اعزہ واقربا ء سے زیادہ محبت کرتا ہے اور آپ ﷺ کی ذات اس کے نزدیک سب سے زیادہ محترم ہے ۔میٹنگ میں فرانسیسی مصنوعات کا بائیکاٹ کرکے ہندوستانی مصنوعات کے استعما ل کی ترغیب دیتے ہوئے محترمہ عائشہ خورشید نے کہا کہ ہمارا احتجاج یہی ہے کہ ہم فرانسیسی مصنوعات کے استعمال کو ترک کردیں اور اس کے متبادل ہندوستانی مصنوعات کو استعمال کریں انہوں نے کہا کہ ہم کیسے برداست کرسکتے ہیں کہ فرانس سرکاری سطح پر نبی کریم ﷺ کے گستاخوں کی حمایت کرے اور اس کے باوجود ہم اس کی مصنوعات کو اپنے گھروں میں رکھیں انہوں نے کہا کہ ہماری اولین ذمہ داری ہے کہ ہم فرانس کو معاشی طور پر وہ زخم دیں کہ آئندہ اسلام دشمن عناصر نبی کریم ﷺ کی شان اقدس میں گستاخی کرنے سے پہلے ہزار بار سوچیں ۔انہوں نے کہا کہ مغرب کے نزدیک سب سے زیادہ معزز شئی پیسہ ہے اگر دنیا بھر کے مسلمانوں نے متحد ہوکر فرانسیسی مصنوعات کا بائیکاٹ کردیا تو فرانس کو گھٹنے ٹیکنے پڑیں گے اور فرانس اسی بائیکاٹ سے سبق حاصل کرلے گا ۔اس موقع پرمحلہ بڑضیاء الحق کی خواتین کی کثیر تعداد نے فرانسیسی مصنوعات کے بائیکاٹ کا اعلان کرتے ہوئے عہد کیا کہ انشاء اللہ ہم اس پیغام کو گھر گھر تک پہنچائیں گے اور اپنی ماؤں بہنوں کو ان مصنوعات کے بائیکاٹ کی ترغیب دیں گے اور ان کے متبادل ہندوستانی مصنوعات سے بھی واقف کرائیں گے ۔