دہلی حکومت سے نظام نہیں سنبھلتاہے تو ہم مرکزی عہدیداروں کی تقرری کریں گے:دہلی ہائی کورٹ

نئی دہلی:دہلی ہائی کورٹ نے منگل کے روز قومی دارالحکومت میں جاری آکسیجن بحران کے حوالے سے انتہائی سخت تبصرہ کیاہے۔ اس نے دہلی حکومت کی سرزنش کی ہے۔عدالت نے کہاہے کہ جہاں آپ کا سسٹم مکمل طور پر ناکام ہوچکا ہے ، اس کا کوئی فائدہ نہیں ہے۔ سسٹم کو ٹھیک کریں اگر آپ کے عہدیدار اس صورتحال کو نہیں سنبھال سکتے ہیں تو ہمیں بتائیں ، اس کے بعد ہم مرکزکے افسران کی تقرری کریں گے۔ ہم لوگوں کو مرنے نہیں دے سکتے۔عدالت نے آکسیجن ریفلرسے کہاہے کہ اگرآکسیجن کی کمی سے ایک بھی آدمی مراتوآپ کوبھی الٹالٹکادیں گے۔واضح ہوکہ دہلی کے کئی اسپتال میں آکسیجن کی کمی سے اموات ہوچکی ہیں لیکن ابھی کسی کوالٹانہیںلٹکایاگیاہے ۔ اس کے علاوہ عدالت میں حاضرنہ ہونے والے پانچ آکسیجن ریفلرز کوتوہین عدالت کانوٹس بھی دیاہے۔مزید برآں عدالت نے دہلی حکومت کو ہدایت کی کہ وہ اے ایچ سی آکسیجن سپلائی کرنے والا یونٹ سنبھال لیں کیونکہ یہ عدالت میں پڑاہے۔ آکسیجن سپلائی کرنے والے کے جھوٹ پر ہائی کورٹ سخت ہورہا ہے۔ جسٹس وپن سنگھی اور جسٹس ریکھا پیلی کی بنچ نے دہلی حکومت کو سرزنش کی ، اس نے آکسیجن سپلائی کرنے والے کے بارے میں بھی سخت سخت موقف اختیار کیا۔ ہائی کورٹ نے آکسیجن سپلائی سے متعلق ایک سپلائر کے جھوٹ کو پکڑنے کے بعد دہلی حکومت کو کہاہے کہ یہ یونٹ کل تک کام سنبھال لیں۔ اس پر ، دہلی حکومت نے عدالت کو بتایاہے کہ آج یہ کیا جائے گا۔