دہلی فساد:مصطفی آباد کی فاروقیہ مسجد اور مدرسہ جامعۃ الہدی کی تعمیرِ نو کے بعد افتتاح

نئی دہلی:(محمدیامین) مصطفی آباد کے تحت برج پوری کی فاروقیہ مسجد میں جمعیۃ علما دہلی کے ذمہ داران اور مقامی لوگوں نے جماعت علما سبائی تمل نمل ناڈو کے وفد کا ان کی خدمات کے اعتراف میں پگڑی باندھ کر شاندار استقبال کیا۔منعقدہ استقبالیہ تقریب میں علما کرام نے کہا کہ مفاد عامہ کے تحت کوئی بھی کام ہو اس سے سماج کو فیض پہنچتا ہے اور اللہ کی خوشنودی بھی حاصل ہوتی ہے اور جس طرح تمل ناڈو کی جماعت علما سبائی اور جمعیۃ علما صوبہ دہلی نے شمال مشرقی دہلی میں خدمات انجام دینے سے فساد متاثرین کی کارو باری اور گھریلو زندگی بحال ہوئی ہے ۔ اسی طرح مساجد اور مدارس جو فساد کی نذر ہوئے تھے ان کی بھی تعمیر ومرمت سے ذکر خداسے روشن ہیں۔ان کا مزید کہنا ہے کہ تمل ناڈو اور دہلی کی تنظیم الگ الگ ہونے کے باوجود دونوں کا مقصد ایک ہی ہے اور وہ ہے بلا تفریق مذہب وملت مفاد عامہ کے تحت کام انجام دینا جن کی جیتی جاگتی تاریخ شاہد ہے۔ قابل ذکر ہے کہ فاروقیہ مسجد اور اس سے ملحقہ مدرسہ جامعتہ الہدیٰ کو فسادیوں نے گزشتہ فروری میں نذر آتش کردیے تھے جس کی تعمیر مرمت میں تمل ناڈو کی جماعت علما سبائی نے بڑھ چڑھ کر اپنا تعاون دیا جس کے نتیجہ میں مسجد اور مدرسہ کی حالت پہلے سے بھی اچھی ہو گئی ہے جس کی نو تعمیر کا افتتاح بھی دونوں تنظیموں کے ذمہ داران نے کیا جس سے مقامی لوگوں اور انتظامیہ نے خوشی کا اظہار کرتے ہوے دونوں تنظیموں کی ستائش کی ہے ۔ جماعت علما سبائی تمل ناڈو کے صدر خواجہ معین الدین قاسمی نے کہا کہ ہم لوگ اپنی تنظیم کے تحت فساد متاثرین کی مدد اور عبادت گاہوںکی مرمت کا جذبہ لے کر آئے تھے لیکن جب ہم نے دہلی کی جمعیہ علما کے ذمہ داران کو دیکھا تو بیحد خوشی ہوئی اور جذبہ کو مزید تقویت ملی۔مولانا حکیم الدین قاسمی نے کہا کہ گوکل پوری کی ٹائر مارکیٹ کو جمعیۃ علما ہند کے تحت بحال کیا گیا ہے اور 156 مکانات اور 144دکانوں کی تعمیر و مرمت کرا کر مالکان کے حوالہ کر کے سیکڑوں بے روزگاروں کو روزگار سے جوڑا گیا ہے۔ مولانا غیور احمد قاسمی نے کہا کہ فساد زدہ علاقوں میں جمعیۃ علما ہند کے کاموں کی تکمیل جاری ہے اور اکابرین کو بلا کر دعائیہ مجلس کا نعقاد بھی کیا جاتا ہے لیکن ابھی فساد متاثرین اصحاب حیثیت کے منتظر ہیں ۔مولانا داؤد امینی (مہتمم مدرسہ با ب العلوم جعفرآباد)نے کہا کہ دوران فساد اور لاک ڈائون مدرسہ با ب العلوم نے مرکز ی حیثیت حاصل کررکھی تھی جس کے تحت نامساعد حالات سے دوچار لوگ چاہے وہ فساد متاثرین ہوں یا کووڈ 19کے مد نظردوران لاک ڈائون ضروریات زندگی کے لیے ضروری اشیا تقسیم کا سلسلہ جاری تھا جس کے نتیجہ میں ہزاروں لوگوں کو فیض پہنچایا گیا۔جامعتہ الہدیٰ کے مہتمم حاجی فخرا لدین نے کہا کہ مصطفی آباد علاقہ نہایت پسماندہ ہے اور فسادکی نذ ر ہونے سے مسجد و مدرسہ کی تعمیر و مرمت کرانا بڑا مشکل امر تھا مگر تمل ناڈوکی تنظیم نے ہمارے مدرسہ اور مسجد کی بہتر سے بہتر تعمیرو مرمت کرا کر ہمارے علاقہ پر بہت ہی بڑا حسان کیا ہے جسے فراموش نہیں کیا جاسکتا۔مولانا ضیا ء اللہ قاسمی مولانا مجیب الرحمن،مولانا عبدالعزیز باقوی اور مولانا عبدالرحمن باقوی نے بھی اظہار خیال کیا۔ تقریب کا آغاز مدرسہ کے بچوں کی تلاوت و نعتیہ کلام سے ہوا جبکہ اختتام خواجہ معین الدین قاسمی کی دعا پر ہوا۔اس موقع پر مولانا اخلاق احمد قاسمی،محمد آزاد،مولانا خلیل احمد قاسمی،مولانا محمدعرفان قاسمی،مولانا جمال قاسمی،مفتی محمد طاہر قاسمی،حاجی بابو، مولانا مزمل،ظہیر الدین،حاجی رئیس احمدسمیت بڑی تعداد میں لوگ موجود تھے۔