دہلی فساد:چارج شیٹ میں لیڈروں اور سماجی کارکنوں کے ناموں پر پولیس کی وضاحت،سیتارام یچوری نے بی جے پی لیڈروں کوگھیرا

نئی دہلی:دہلی پولیس نے ان خبروں کی تردید کی ہے کہ سی پی آئی کے جنرل سکریٹری سیتارام یچوری ، سوراج ابھیان کے لیڈر یوگیندر یادو ، ماہرمعاشیات گھوش اور کچھ سماجی کارکنوں سے دہلی فسادات کے معاملے میں ضمنی چارج شیٹ شامل کرنے کو کہا گیا ہے۔جب یہ سوال کھڑا ہوا تو دہلی پولیس نے ایک بیان جاری کرتے ہوئے کہا ہے کہ جعفرآبادفسادات سے متعلق کیس کی ضمنی چارج شیٹ میں ماہرین تعلیم اور سیاستدانوں کانام تشویشناک ہے۔ یہ نام سی اے اے مخالف مظاہرے منعقد کرنے کے معاملے میں ایک ملزم کے انکشاف میں سامنے آئے ہیں۔یہ بیان اسی طرح ریکارڈکیاگیاہے جیسے ملزم نے کہا ہے۔ کسی کے صرف انکشافی بیان کی بنیادپرکسی شخص پرالزام نہیں عائد کیا جاسکتاہے۔ تاہم مزیدقانونی کارروائی صرف ثبوتوں کی بنیادپرکی جاتی ہے۔ معاملہ ابھی بھی زیرغور ہے۔سی پی آئی (ایم) کے جنرل سکریٹری سیتارام یچوری نے مرکزی حکومت سے دہلی پولیس کی چارج شیٹ سے متعلق سوال کیا ہے۔ سیتارام یچوری نے ٹویٹ کیا ہے کہ دہلی پولیس بی جے پی کی مرکزی حکومت اور وزارت داخلہ کے تحت کام کرتی ہے۔ ان کی غیر قانونی حرکتیں بی جے پی کی اعلیٰ سیاسی قیادت کے کردار کی عکاسی کرتی ہیں۔ وہ حزب اختلاف کے سوالات اور پرامن مظاہروں سے خوفزدہ ہیں ، اور طاقت کا ناجائز استعمال کرکے ہمیں روکنا چاہتی ہے۔سیتارام یچوری نے کہاہے کہ دہلی میں ہوئے تشددمیں 56 افراد ہلاک ہوئے ہیں۔ نفرت انگیزتقاریر کی ویڈیوز ہیں ، ان پر کارروائی کیوں نہیں کی جارہی ہے؟کیونکہ حکومت نے حکم دیاہے کہ حزب اختلاف کو کسی بھی طرح سے لپیٹ لیاجائے۔ مودی اور بی جے پی کا یہی اصلی چہرہ، کردار ، چالیں اور سوچ ہیں۔خبررساں ادارے پی ٹی آئی کے مطابق یوگیندر یادو نے اس رپورٹ کو فورا ہی حقائق شکن اورغلط قرار دیاہے۔یوگیندریادونے کہاہے کہ میں نے محسوس کیاہے کہ حوالہ میں میری تقریر کا ایک جملہ بھی نہیں ہے۔ مجھے حیرت ہوتی ہے کہ دہلی پولیس نے میری تقریروں کی ریکارڈنگ کو دیکھنے کی زحمت بھی نہیں کی جو عوام میں عام ہیں۔