کوووڈ۔19: انسانی حقوق کمیشن نے وزارت صحت اور حکومت دہلی کو نوٹس جاری کیا

نئی دہلی:کانگریس کے لیڈراجے اماکن کی شکایت پرنوٹس لیتے ہوئے قومی انسانی حقوق کمیشن نے مرکزی وزارت صحت اوردہلی حکومت کو نوٹس جاری کیاہے۔اجے ماکن نے الزام لگایاتھاکہ قومی دارالحکومت میں کوویڈ 19 کے مریضوں کے لیے بسترکی کمی ہے اور مناسب تعدادمیں ٹیسٹ نہیں کیے جارہے ہیں۔ کمیشن نے ایک بیان میں کہا ہے کہ وہ سمجھتا ہے کہ یہ سرکاری ایجنسیوں ، اسپتالوں ، ڈاکٹروں کے ساتھ ساتھ مریضوں اور ان کے اہل خانہ کے لیے غیر متوقع صورتحال ہے ، لیکن ریاست اپنے شہریوں کو ہر کوشش کیے بغیر مرنے کے لیے نہیں چھوڑسکتی ہے۔ایک سینئر عہدیدار نے بتایاہے کہ دہلی حکومت اور وزارت صحت کو نوٹس جاری کردیئے گئے ہیں۔کمیشن نے ایک بیان میں کہاہے کہ شکایت کنندہ دہلی ریاستی کانگریس کے سابق چیئرمین نے نہ صرف الزامات عائد کیے ہیں بلکہ ان کی شکایت کی دلیل میں اعداد و شماربھی فراہم کیے ہیں۔بیان میں کہاگیاہے کہ اگر یہ الزامات سچ ہیں تو پھر اس سے عام لوگوں کی حالت زار کی طرف سرکاری اداروں کے غیر منصفانہ نقطہ نظرکاسنگین مسئلہ پیدا ہوتا ہے جو انسانی حقوق کی سنگین خلاف ورزی کی طرح ہے۔ اعدادوشمار بتاتے ہیں کہ سرکاری اداروں کوفوری طور پر موثر اقدامات کرنے کی ضرورت ہے۔ بیان میں کہاگیاہے کہ یہ الزام لگایا گیا ہے کہ اس وبا کے دوران اپنی جانوں سے ہاتھ دھو بیٹھنے والوں کی آخری رسومات میں بہت تاخیرہوئی ہے۔نوٹس جاری کرتے ہوئے کمیشن نے کہاہے کہ دہلی حکومت اور مرکزی وزارت صحت دونوں ، ایک دوسرے کی مشاورت سے ، دس دن میں ایک جامع رپورٹ دینے کے معاملے پرغور کریں۔ کمیشن نے کہاہے کہ اس وقت کے دوران دہلی حکومت کوویڈ 19 کے مریضوں کے لیے بستروں کی تعدادبڑھائے گی اورایک دن میں ہونے والے ٹیسٹوں کی تعدادمیں بھی اضافہ کرے گی۔