کووڈ 19 کی موت کے معاملے میں خاندان کو معاوضہ دے حکومت:سپریم کورٹ سے اپیل

نئی دہلی:کووڈ 19 کی وجہ سے موت واقع ہونے کی صورت میں متوفی کے لواحقین کو معاوضے کے لئے رہنما اصول بنائے جانے کی درخواست کی گئی ہے ۔ سپریم کورٹ میں درخواست دائر کرکے حکومت ہند اور ملک کی تمام ریاستوں کو مدعا علیہ بنایا گیا ہے اور سپریم کورٹ سے اپیل کی گئی ہے کہ وہ حکومت کو ہدایت دے کہ وہ معاوضے کے لئے ہدایت نامہ تیار کرے تاکہ کورونا سے موت کے معاملے میں متاثرہ خاندان کو معاوضہ دیا جاسکے۔سپریم کورٹ میں دائر درخواست میں کہا گیا ہے کہ کورونا کیسز میں مسلسل اضافہ ہورہا ہے، ہر روز لوگ کورونا کی وجہ سے مر رہے ہیں، صحت کی دیکھ بھال سے وابستہ افراد تک بہت سارے ڈاکٹر، پیرا میڈیکل عملہ کورونا کا شکار ہوچکے ہیں اور ان کی موت بھی ہوگئی ہے۔ نیز ٹیکس دہندگان کی روز مرہ کی زندگی کورونا کے وقت پر داؤ پر لگی ہے۔ لوگ کورونا کے وقت مستقل طور پر اپنی ڈیوٹی سرانجام دے رہے ہیں اور جان کو خطرہ ہے۔ وقت کا تقاضا یہ ہے کہ حکومت ان شہریوں کی حفاظت کرے جن کی جان کو خطرہ ہے۔ اگر کوئی ملازمت اور ڈیوٹی کے وقت موت کے منہ میں چلاجاتاہے تو حکومت کو چاہئے کہ وہ اس کے اہل خانہ کو معاوضہ دے۔درخواست گزار نے اپنی درخواست میں کہا ہے کہ کووڈ 19 کو ڈیزاسٹر مینجمنٹ ایکٹ کے تحت آفت قرار دیا گیا ہے، ملک کے عام شہری روز مر رہے ہیں، بہت سارے لوگ ہیں جو ڈیوٹی کے دوران ہی ہلاک ہوگئے تھے، ملک کے بیشتر افراد غریب ہیں، ایسی صورتحال میں حکومت کو اخلاقیات کا مظاہرہ کرنا چاہئے اور جب تک کووڈ 19 کی ویکسین نہیں دی جاتی ہے اور شہری کو ان تمام معاملات میں ریلیف ملنا چاہئے جو کووڈ کی وجہ سے ہوئے ہیں۔ حکومت کرونا سے مرنے والوں کے لواحقین کو معاوضہ دے، جو غریب ہیں اور فوت ہوئے ہیں، ان کو خاص طور پر معاوضہ دیا جانا چاہئے۔کووڈ کی وجہ سے کتنے افراد کی موت ہوئی ہے اور ان کو معاوضہ دینے کے لئے کیا اقدامات اٹھائے گئے ہیں اس بارے میں ریاستی حکومت کو عدالت عظمیٰ کے سامنے ایک اسٹیٹس رپورٹ پیش کرے۔ عدالت سے استدعا کی گئی ہے کہ صحت کی دیکھ بھال کرنے والے عملہ یا ضروری خدمات سے وابستہ افراد کو بہتر معاوضہ دیا جائے۔ حکومت کو معاوضے کے لئے رہنما اصول تیار کرنے کی ہدایت دی جائے۔