کورونا بحران سے نمٹنے کے لیے حکومت کاغیر انسانی رویہ قابل مذمت:پرینکا گاندھی

نئی دہلی:کانگریس کی جنرل سکریٹری پرینکا گاندھی واڈرا نے اتر پردیش میں کورونا وائرس کے انفیکشن کی دوسری لہر کے درمیان ریاست پر حکمرانی کرنے میں مکمل طور پر ناکام ہونے کا الزام عائد کرتے ہوئے کہاہے کہ یوگی حکومت نے پہلے ہی لوگوں کی حفاظت اور ان کا تعاون کرنے کا کردار ترک کردیا تھا ۔پارٹی کی اتر پردیش انچارج پرینکاگاندھی نے ایک خصوصی انٹرویو میں کہا ہے کہ کوویڈ 19 بحران سے نمٹنے میں ، بی جے پی حکومت کے ذریعہ لوگوں کے ساتھ ایک بار پھر متکبرانہ ، استبدادی اورغیر انسانی رویہ رہا ہے۔ پرینکاگاندھی نے کہاہے کہ بنیادی مسئلہ یہ ہے کہ ریاستی حکومت نے لوگوں کی حفاظت ، سہولت اور مدد کرنے کے کام کو بہت پہلے روک دیا ہے۔ اس نے ایک بار پھر اتر پردیش کے عوام کے ساتھ اپنا متکبر ، جنونی اور غیر انسانی رویہ دکھایا ہے۔پرینکاگاندھی نے دعویٰ کیاہے کہ گورننس کی سطح پر سب سے بڑی ناکامی یہ تھی کہ منصوبہ نہیں ، کوئی تیاری نہیں تھی اور دور اندیشی نہیں تھی۔پرینکاگاندھی نے کہاہے کہ دنیا کے بہت سے ممالک کو اس وبا کی دوسری لہر کا سامنا کرنا پڑا ہے۔ ہم نے ان سے کیا سیکھا؟ پہلی لہر اور دوسری لہر کے درمیان ہم نے اس وقت کو کیسے استعمال کیا؟ ان کے مطابق اتر پردیش حکومت کے اپنے سروے کے نتائج سے یہ ظاہر ہوا ہے کہ پانچ کروڑ افراد اس وائرس کے رابطے میں آئے اور یہ اس بات کی علامت ہے کہ دوسری لہرآرہی ہے۔ پرینکاگاندھی نے ریاستی حکومت کو نشانہ بناتے ہوئے کہا ہے کہ اتر پردیش حکومت کو مشورہ دیا گیا تھا کہ جانچ کوبڑے پیمانے پر بڑھایا جائے۔ کیا ہوا؟ اس نے جانچ کم کردی۔ انہوں نے یہ بھی الزام لگایا کہ لوگوں کی جان بچانے پرپورے وسائل کو استعمال کرنے کے بجائے ، حقیقت پر پردہ ڈالنے کے لیے اب بھی وقت اور وسائل موجودہیں۔کانگریس کی جنرل سکریٹری نے کہا ہے کہ حکومت نے لوگوں کو مایوس کیا ہے۔ اس کی نا اہلی اور وضاحت کے فقدان کی وجہ سے لوگوں کوانسانی قیمت ادا کرنا پڑتی ہے جس کی قیمت کبھی ادا نہیں کی جاتی ہے۔انہوں نے یہ بھی سوال اٹھایاہے کہ دنیا میں ایسا کیا ہوتا ہے کہ طبی افسران کو ایک وبا کی حالت میں لوگوں کو اسپتال میں داخل کرنے کے لیے اجازت حاصل کرناہوتاہے؟پرینکاگاندھی نے بتایاہے کہ یہ اتر پردیش میں کس طرح کی حکمرانی ہے۔ قابل ذکر ہے کہ پرینکاگاندھی نے حال ہی میں کورونا وبا کے بارے میں وزیراعلیٰ یوگی آدتیہ ناتھ کو ایک خط لکھا تھا اور کہا تھا کہ مریضوں کو بھرتی کرنے کے لیے افسرکی اجازت ختم کردی جانی چاہیے۔