کرونابحران کے پیش نظر 13دن قبل کمبھ کے اختتام کا اعلان

دہرا دون:مرکزی کی اپیل کے بعد سادھو سنتوں نے ہریدوار کمبھ کومقرر ہ وقت سے 13 دن پہلے ہی ختم کرنے پر رضا مندی ظاہر کردی ہے ۔ جس کی وجہ سے عام لوگوں نے راحت سانس لی ہے ۔ تاہم کمبھ میں علامتی طور پر مذہبی تقاریب کا انعقاد جاری رہے گا۔ 13 اکھاڑوں میں سب سے بڑی جونا اکھاڑا نے ہفتہ کی شام کمبھ کے خاتمے کا اعلان کیا۔ نرنجنی اور آنند اکھاڑا پہلے ہی اپنی طرف سے کمبھ کے خاتمے کا اعلان کرچکے ہیں۔ طے شدہ نظام الاوقات کے مطابق کنبھ میلہ 30 اپریل تک جاری رہنا تھا، اور آخری شاہی اسنان 27 اپریل کو ہونا تھا۔ ہری دوار کے چیف میڈیکل آفیسر ، ڈاکٹر ایس کے جھا نے بتایا کہ کمبھ میلے میں شرکت کرنے والے 175 سادھوؤں کی کرونا رپورٹ ہفتہ کو پازیٹیو آئی ہے۔ اس کے بعد آنے والے سادھوؤں کی تعداد بڑھ کر 229 ہوگئی ہے۔ بڑھتے انفیکشن کو دیکھ کر پی ایم مودی نے جونا اکھاڑہ کے آچاریہ مہامنڈلیشور سوامی اودھشیانند گیری سے بات کی۔ انہوں نے اپیل کی کہ وہ کمبھ میں لوگوں کی بھیڑ ختم کریں اور اسے صرف علامتی طور پر محدود رکھیں۔اتراکھنڈ حکومت گذشتہ 2 دن سے ان سنتوں کو راضی کرنے کے لئے خفیہ ملاقاتیں کررہی تھی، دراصل مرکزی حکومت جلد سے جلد میلے کا خاتمہ چاہتی تھی،لیکن وہ اس کے لئے حکومتی ہدایات جاری نہیں کرنا چاہتی تھی، بلکہ مرکز خود سنتوں کے ذریعہ میلے کے اختتام کا اعلان چاہتی تھی۔ البتہ ان ملاقاتوں کا اثر بھی ظاہر ہوا۔ دو دن پہلے ، نرنجنی اور آنند اکھاڑا نے اپنی طرف سے میلے کے اختتام کا اعلان کردیا تھا۔ اب حکومت نے جونا اکھاڑہ کی طر ف سے کمبھ کے اختتام کے اعلان سے راحت کی سانس لی ہے۔وہی جونا اکھاڑہ کے مہا منڈلیشور سوامی اودھیشا نند گیری نے کہاکہ کمبھ علامتی طور پر جاری رہیں گے اور اس ضمن میں تمام مذہبی تقاریب بھی منعقد ہوں گے ۔