کانگریس نے نوٹ بندی کی چوتھی برسی کو’یومِ دھوکہ‘کے طورپرمنایا

نئی دہلی:اتوارکے روز کانگریس نے نوٹ بندی کے چارسال بعد’یوم دھوکہ‘ منایا۔ اس موقع پر کانگریس کے لیڈر اور راجیہ سبھا کے سابق ممبر پارلیمنٹ پرمود تیواری نے لکھنؤمیں پریس کانفرنس کی۔ وزیر اعظم مودی پر کڑی تنقید کرتے ہوئے انہوں نے کہاہے کہ اس سے انکار نہیں کیا جاسکتا ہے کہ اس سے پہلے 86 آمروں نے نوٹ بندی کی تھی۔ وزیراعظم نریندر مودی نے نوٹ بندی کا فیصلہ کرکے اپنے آپ کو اس صف میں کھڑا کیا ہے۔ میں یہ نہیں کہہ رہاہوں ۔یہ تاریخ میں یہ درج ہے۔اس دوران پرمودتیواری نے راجیہ سبھا میں دیئے گئے سابق وزیر اعظم من موہن سنگھ کے بیان کی مثال دی۔ اس میں کہاگیاہے کہ منظم اورقانونی لوٹ مار کے ساتھ نوٹ بندی کی گئی ہے۔ ایک ہی جھٹکے میں ، مودی نے صرف چند دوستوں اور بی جے پی کوفائدہ پہونچایا۔ مودی جی نے کہاہے کہ مجھے 50 دن دیں۔بے نامی املاک ، کرپشن ، کالا دھن ، دہشت گردی اور نکسل ازم کے مکمل خاتمے کے لیے بالکل ضروری ہے ، اس درد کے دوران آپ لوگوں کو جو تکلیف اور پریشانی کا سامنا کرناپڑے گا۔ان دنوں میں پوری صورتحال بہتر ہوجائے گی۔ اگر حالات بہتر نہیں ہوئے تو آپ چوراہے پر کھڑے ہوں گے ، میں کھڑا ہوں اور ملک کے عوام کی سزا قبول کروں گا۔ تیواری نے کہاہے کہ آج کانگریس پارٹی مودی جی کو یاد دلارہی ہے کہ مودی جی کوملک کے عوام سے معافی مانگنی چاہیے۔