چینی دراندازی نہیں ہوئی تو20 فوجی کیسے اورکیوں ہلاک ہوئے؟:سونیاگاندھی

نئی دہلی:کانگریس کی صدر سونیا گاندھی نے مشرقی لداخ میں چینی فوج کی دراندازی پر ایک بار پھر مرکزکی مودی حکومت پر حملہ کرتے ہوئے سوالات اٹھائے ہیں۔ کانگریس کے ذریعہ جاری کردہ اس ویڈیومیں سونیا گاندھی نے مودی سرکار پر دراندازی کاواضح جواب نہیں دینے کا الزام عائد کیا۔ انہوں نے پوچھاہے کہ کیا حکومت اس معاملے میں صورتحال کو واضح کرکے ملک کواعتمادمیں لے گی۔سونیا گاندھی نے اس ویڈیومیں کہاہے کہ آج کانگریس اورملک کے شہری ہمارے20 فوجیوں کی شہادت کو خراج عقیدت پیش کررہے ہیں۔ملک ان فوجیوں کا ہمیشہ شکر گزار رہے گا جنھیں وادی میں گلوان میں شہادت ملی۔انہوں نے کہاہے کہ کانگریس اور پورا ملک فوج اور جوانوں کے ساتھ کھڑاہے ، ایسی صورتحال میں حکومت اپنی ذمہ داری سے پیچھے نہیں ہٹ سکتی۔ انہوں نے کہاہے کہ وزیر اعظم کہتے ہیں کہ ہمارے ملک میں دراندازی نہیں ہوئی ہے ، لیکن وزیردفاع اور وزارت خارجہ اکثر چینی دراندازی پر وسیع تبادلہ خیال کرتے ہیں۔ چینی جارحیت کی تصدیق کے لیے فوج کے جنرل ، دفاعی ماہرین اور اخبارات سیٹلائٹ کی تصاویربھی دکھا رہے ہیں۔سونیاگاندھی نے پوچھا ہے کہ جب ہم شہداکے سامنے جھک رہے ہیں ، ملک جاننا چاہتا ہے کہ اگروزیراعظم کے مطابق دراندازی نہیں ہوئی تو ہمارے 20 فوجیوں کی شہادت کیسے اورکیوں ہوئی؟ حکومت لداخ میں چینی فوج کے زیرقبضہ اراضی کو جوش وخروش کے بعد کیسے واپس لے گی۔کیاچین وادی گلوان اور پینگینگسو علاقے میں بنکرتعمیرکرکے ہماری خطے کی سالمیت کی خلاف ورزی کررہا ہے؟ ‘ انہوں نے آخرمیں کہاہے کہ کیاحکومت اس موضوع پر پورے ملک کو اعتمادمیں لے گی؟ سونیاگاندھی نے کہاہے کہ آج پورا ملک فوج اورجوانوں کے ساتھ مستقل طور پر کھڑا ہے ، ایسی صورتحال میں مرکزی حکومت کو فوج کو مکمل تعاون ، مدداورطاقت دیناچاہیے۔یہ سچی حب الوطنی ہے۔