19 C
نئی دہلی
ادبیات نظم

تیرا جسم اور تیری مرضی

قندیل
  ادریس آزاد   اب تک کی تاریخ میں شاید ہراِک شئے پر حاوی ہیں   تُجھ پر مُجھ پر اور اُن سب پر جتنے...
نظم

یہ ظلم کب تک؟یہ جبر کب تک؟سوال رکھاہے عورتوں نے-ابھیشیک شکلا

قندیل
  علم بغاوت کا پھر سے بڑھ کر سنبھال رکھاہے عورتوں نے یہ ظلم کب تک؟یہ جبر کب تک؟سوال رکھاہے عورتوں نے اندھیری راتوں کا...
نظم

جھوٹوں کی سرکارپہ لعنت!

قندیل
احمدبن نذر جھوٹی کرسی،جھوٹے بھاشن، جھوٹوں کی سرکار پہ لعنت جھوٹے اینکر،جھوٹے چینل،جھوٹے ہر اخبار پہ لعنت جھوٹے وعدے،جھوٹی قسمیں،جھوٹی ہر گفتار پہ لعنت جھوٹوں...
نظم

ہم شاہین ہیں!

قندیل
صالحہ صدیقی (جامعہ ملیہ اسلامیہ،نئی دہلی) salehasiddiquin@gmail.com پردے کو کمزور عورت کی نشانی ڈری،سہمی اپنے وجود کی جنگ لڑنے والی گھر کی چہار دیواری میں...
ادبیات نظم

بھارتی نوجوانوں کا ترانہ- علی زریون

قندیل
  جو کاغذ تم نے مانگا ہے وہ کاغذ تو مِرے پاس نہیں مِرے پاس تو بس یہ آنسو ہیں تمہیں اشکوں کا احساس نہیں...