کارٹون واقعہ افسوس ناک،لیکن فرانس چر چ میں حملے غلط ہیں:اسدالدین اویسی

نئی دہلی:فرانس میں اساتذہ کے قتل اور پھر چرچ پر حملہ جیسے واقعات ہوئے۔یہ واقعات حضرت محمدﷺ پر کارٹون بنانے پرہوئے۔گرچہ خبریہ بھی ہے کہ چرچ پرحملہ کرنے والامسلمان نہیں تھا۔دنیابھرکے تمام اسلامی ممالک نے فرانس میں مسلسل مسلمانوں کے جذبات سے کھلواڑپرتنقیدکی ہے۔جب کہ بھارت میں فرقہ پرست عناصرخوش ہیں ۔ہاں چرچ اوراستاذکے واقعے پرحقوق انسانی کی دہائی دینے والے ہنگامہ کررہے ہیں ۔یہاں تک کہ کل انڈیااسلامک کلچرل سنٹرکونشانہ بنایا گیا اوراس کے سائن بورڈ پر اشتعال انگیزپوسٹر چسپاں کردیا گیا۔آل انڈیا مجلس اتحاد المسلمین (اے آئی ایم آئی ایم) کے سربراہ اسدالدین اویسی نے فرانس میں دہشت گردی کے واقعات کو غلط قرار دیا ہے۔پیر کو نجی نیوز چینل سے گفتگومیں اویسی نے کہاہے کہ حضرت محمد صلی اللہ علیہ وسلم پر کارٹون بنائے جانے کی وجہ سے انہیں بہت تکلیف ہوئی ہے ، لیکن تشددکے واقعات سراسر غلط ہیں۔اویسی نے کہا کہ جو لوگ جہاد کے نام پر بے گناہوں کو مارتے ہیں وہ صرف قاتل ہیں۔ اسلام اس کی تائیدنہیں کرتا۔ انہوں نے کہا کہ آپ جہاں رہتے ہیں وہاں کے قوانین کو ماننا ہے۔ آپ کسی کو نہیں مار سکتے۔اویسی نے یوپی میں مبینہ لوجہادپرقانون سازی پرکہاہے کہ بہارمیں بی جے پی کی دال نہیں گل رہی ہے ۔اس لیے ایسے مدعے اٹھاکروہ نفرت پھیلارہی ہے۔