’واللہ خیرالماکرین ‘ برے کا انجام برا ہی ہوتا ہے ـ شکیل رشید

ممبئی پولیس کے معطل اسسٹنٹ پولیس انسپکٹر سچن وازے نے ’’دوسروں‘‘ کے لیے جو گڑھا کھودا تھا اس میں خود ہی جا گرا ہے ۔ یہ ’’دوسرے‘‘ جن کے لیے گڑھا کھودا گیا تھا کوئی اور نہیں مسلمان ہیں ۔ جی ! اب یہ بات سامنے آئی ہے کہ صنعت کار مکیش امبانی کی کثیر منزلہ عمارت کے باہر دھماکہ خیز مواد سے بھری ہوئی اسکارپیو کار خود وازے نے ہی کھڑی کی تھی اور اپنے ملوث ہونے کا سراغ چھپانے کے لیے اس نے مبینہ طور پر من سکھ ہیرین کو قتل کر کے اس کی لاش ممبرا اور کلوا کے درمیان کھاڑی میں پھینکی تھی، اور اسے خودکشی کا رنگ دینے کی کوشش کی تھی ۔ یہ من سکھ ہیرین وہی شخص تھا جس کی اسکارپیو کار میں دھماکہ خیز مواد بھرا ہوا ملا تھا ۔ وازے نے مزید یہ کیا کہ اس معاملے میں انڈرورلڈ کے اپنے تعلقات کا استعمال کرتے ہوئے دہلی کے تہاڑ جیل سے ’’ جیش الہند ‘‘کے نام سے مکیش امبانی کو دھمکی بھرا فون کروایا ۔ فون کرانے کے دو مقصد تھے ، ایک تو اپنے ملوث ہونے کے تمام ثبوتوں کو مٹانا ، اور دوسرے دھماکہ سے بھری کار کی موجودگی اور مکیش امبانی کو دھمکی، اور من سکھ ہیرین کی موت کا الزام ’’جیش الہند‘‘ نامی ایک ’’دہشت گرد‘‘ تنظیم کے سر ڈال کر مسلم نوجوانوں کی گرفتاری کی ایک نئی مہم شروع کرنا ۔ یہ ساری منصوبہ بندی کس لیے کی گئی تھی ، اس سوال کا جواب مشکل نہیں ہے ۔ مقصد پیسہ بٹورنا تھا ۔ لوگوں کو گرفتاری کا خوف دلا کر ان کی گاڑھی کمائی کو اپنی جیب میں ٹھونسنا تھا ۔ یہ ہوتا آیا ہے ، اور پھر یہی ہونے والا تھا ۔ اطلاعات تو یہ ہیں کہ’’ جیش الہند ‘‘کا خالق وازے ہی تھا ۔ اس تنظیم کے نام پر نہ جانے کتنے مسلم نوجوان گرفتار کیے گیے ہیں ۔ ایسی ہی ایک اور تنظیم یاد آ گئی ہے’’ انڈین مجاہدین ‘‘ ۔ اس کے نام پر بھی کتنے ہی نوجوان گرفتار کیے گیے ہیں ۔ کہا یہی جاتا ہے کہ ’’ انڈین مجاہدین ‘‘کا کوئی وجود نہیں ہے، یہ بھی چند ’’ اعلیٰ دماغ ‘‘ پولیس والوں کا کھڑا کیا ہوا ایک ہوّا ہے ۔ بات وازے کی چل رہی تھی، اور بہت دنوں تک وازے کی بات چلے گی، بلکہ اگر یہ کہا جائے تو زیادہ سچ ہوگا کہ وازے کا ذکر خواجہ یونس کی حراستی موت کے بعد سے ہو ہی رہا ہے ۔ ایک بارسوخ پولیس افسر ، جو لالچ سے اندھا ہو کر قانون سے بھی اور انسانی جانوں سے بھی کھیل رہا تھا ۔ لیکن کب تک، اللہ رب العزت کا کھیل سب پر بھاری پڑتا ہے، وازے پر بھی بھاری پڑا ہے ۔ بے قصوروں کوپھنسانے کی منصوبہ بندی الٹے گلے کا پھندا بنتی جا رہی ہے : وَ مَكَرُوْا وَ مَكَرَ اللّٰهُؕ وَ اللّٰهُ خَیْرُ الْمٰكِرِیْنَ۔ ( اور انہوں نے خفیہ تدبیر کی اور الله نے بھی خفیہ تدبیر کی ، اور الله سب خفیہ تدبیر کرنے والوں سے بہتر ہے) اللہ کی پلاننگ کامیاب ہوتی ہے، ابھی تو وازے کا چہرہ اجاگر ہوا ہے مزید چہرے بھی، ان کے چہرے جو وازے کے پشت پناہ تھے، چھپے نہیں رہیں گے، ان شا اللہ ۔