بجٹ 2021:ٹرین مسافروں کےلیے کچھ نہیں

نئی دہلی:اس بجٹ میں ٹرین میں سفر کرنے والوں کے لیے کوئی خاص بات نہیں تھی، ایک بھی نئی ٹرین کا اعلان نہیں کیا گیا ہے۔ وزیر خزانہ نے ریلوے ملازمین کے متعلق بھی کچھ نہیں کہا ہے البتہ میٹرو ٹرین کی توسیع پر توجہ رہی ہے ۔مسافروں کو سفر کا بہتر تجربہ دینے کےلیے بجٹ میں وسٹا ڈوم کوچ متعارف کروائے جانے کا اعلان کیا گیا ہے۔ دسمبر 2020 میں 180 کلومیٹر فی گھنٹہ کی رفتار سے چلنے والی وسٹا ڈوم کوچ ٹرین کا کامیاب تجربہ کیا گیاتھا، یہ کوچز سیاحت کو فروغ دینے کے مقصد سے شروع کیے کئے جارہے ہیں۔بجٹ تقریر میںوزیر خزانہ نرملا سیتا رمن نے کہا کہ میٹرو اب بھی 702 کلومیٹر کے ٹریک پر چل رہی ہے۔ 27 شہروں میں 1016 کلومیٹر طویل میٹرو پر کام جاری ہے۔ اس کے علاوہ ٹیئر ٹو شہروں میں میٹرو لائٹس اور میٹرو نیو کم لاگت کے ساتھ شروع کئے جائیں گے۔ کوچی میٹرو میں 1900 کروڑ کی لاگت سے 11 کلومیٹر کا حصہ ٖتعمیر کیا جائے گا۔ چنئی میں 63 ہزار کروڑ کی لاگت سے 180 کلومیٹر طویل میٹرو روٹ تعمیر ہو گا۔ بنگلورو میں 58 کلومیٹر لمبی میٹرو لائن بھی تعمیر کی جائے گی۔ ناگپور میں 5976 کروڑ اور ناسک میں2092 کروڑ سے میٹر و کی تعمیر کی جائے گی۔ریلوے نقل و حمل کے بارے میں کوئی نیا اعلان نہیں کیا گیا ہے ، وزیر خزانہ نے اپنے پرانے نیشنل ریل پلان 2030 کو ہی دہرادیا ہے، جو 2020 میں شروع کیا گیا تھا۔ انہوں نے کہا کہ ریلوے نے نیشنل ریل پلان 2030 تیار کیا ہے ،تاکہ مستقبل میں ریلوے کا نظام تیار کیا جاسکے اور مال برداری کی قیمت کم ہوسکے۔ جون 2022 تک ایسٹرن اور ویسٹرن ڈیڈی کیٹیڈ فریٹ کوریڈور تیارکیا جائے گا۔ سوم نگر-گومو سیکشن کو پبلک پرائیویٹ پارٹنرشپ (پی پی پی موڈ) کے ساتھ بنایا جائے گا۔ گومو -دن کونی سیکشن بھی اسی طرح تعمیر کیا جائے گا۔ کھڑگ پور وجے واڑہ ، بھساول کھڑگ پور ، اٹارسی وجے واڑہ فیوچر کوریڈور بنائے جائیں گے ۔ قومی ریل منصوبے کے مطابق 2030 تک مال بردار سامان کی ریلوے کا حصہ 45 فیصد تک بڑھانا ہے۔