بی جے پی رہنما شازیہ علمی نے بی ایس پی کے سابق رکن پارلیمنٹ پر لگایا بدسلوکی کا الزام،مقدمہ درج

نئی دہلی:بی جے پی رہنما شازیہ علمی نے بی ایس پی کے سابق ممبر پارلیمنٹ اکبر احمد ڈمپی پر بدسلوکی کا الزام عائد کیا ہے۔ شازیہ نے ڈمپی کے خلاف اس معاملے کے بارے میں وسنت کنج پولیس اسٹیشن میں شکایت درج کروائی ہے۔شازیہ کے مطابق 5 فروری کو وہ ایک پارٹی میں شریک ہوئی جہاں ڈمپی بھی موجود تھے اوروہ کسی معاملے پر ان کے ساتھ بدسلوکی سے پیش آئے۔ جس کے بعد انہوں نے تھانہ میں ان کے خلاف شکایت درج کروائی ہے۔ بتایا جارہا ہے کہ پولیس نے ڈمپی کے خلاف 7 فروری کو آئی پی سی کی دفعہ 506 اور 509 کے تحت مقدمہ درج کرلیا ہے۔شازیہ نے پولیس کو دیے گئے ایک بیان میں کہا ہے کہ میں یہ معاملہ عوام کے سامنے نہیں لانا چاہتی لیکن ڈمپی نے میرے ساتھ بدسلوکی کی ہے۔ انہوں نے بتایا کہ ڈنر پارٹی میں شرکت کرنے والے چیتن سیٹھ اور دیگر افراد نے ڈمپی کو روکنے کی کوشش کی لیکن وہ مسلسل بدسلوکی کررہے تھے۔ انہوں نے کہا کہ وہ ہندی میں مجھے گالیا ں دے رہے تھے۔ میں ایک مثال قائم کرنا چاہتی ہوں کہ ایسے لوگوں کو بخشا نہیں جانا چاہیے۔وہیں یہ بھی بتایا جارہا ہے کہ اس پورے معاملے میں ڈمپی نے ابھی تک کوئی ردعمل ظاہر نہیں کیا ہے۔ ڈی سی پی نے پرتاپ سنگھ کو اشارہ کیا کہ ہمیں ان کے خلاف شکایت موصول ہوئی ہے اور کارروائی کی جائے گی۔واضح رہے کہ شازیہ اپنے سیاسی کیریئر سے قبل ایک صحافی رہی ہیں۔ انہوں نے اپنے سیاسی کیریئر کا آغاز عام آدمی پارٹی سے کیا۔ اس کے بعد انہوں نے بی جے پی کا دامن تھام لیا۔