بہار میں سیاسی گھمسان جاری،مانجھی الیکشن نہیں لڑیں گے

پٹنہ:بہار میں سیاسی اتھل پتھل کا سلسلہ جاری ہے عظیم اتحاد سے ناطہ توڑ کر ہندستان عوام مورچہ کے سربراہ جتین رام مانجھی جے ڈی یو میں آگئے ہیں اس سے این ڈی اے کو مزید توانائی ملے گی۔ جیتن رام مانجھی کی این ڈی اے میں شمولیت پر جے ڈی یواوربی جے پی کے قد آور لیڈران بہت خوش ہیں تو این ڈی اے ہی کی اہم حلیف ایل جے پی برہم ہے۔ ایل جے پی کے رہنمائوں کا کہنا ہے کہ جتین رام مانجھی نے این ڈی اے حلیف جماعتوں سے رابطہ نہیں کیا اور نہ ہی حلیف جماعتوں کے ساتھ اس موضوع پر گفتگو ہوئی ہے ۔اس لیے جیتن رامانجھی کو اسمبلی انتخابات میں سیٹوں کی تقسیم میں جے ڈی یو کو اپنے کوٹے کا سیٹ دینا ہوگا۔ ویسے بھی ایل جے پی جے ڈی یو میں تلخی بنی ہوئی ہے۔ ایل جے پی کے سربراہ چراغ پاسوان مسلسل نتیش حکومت کے طریقۂ کار پر سوال اٹھاتے رہے ہیں۔ سیٹوں کی تقسیم باعزت طریقہ سے کرنے کیلئے بھی وہ جے ڈی یو پر دبائو ڈال رہے ہیں لیکن ابھی تک بات نہیں بنی ہے۔ہندستانی عوام مورچہ کے سربراہ جیتن رام مانجھی نے کہا کہ وہ جے ڈی یو کے ساتھ آکر بہت خوش ہیں۔ این ڈی اے کو واضح اکثریت دلانے میں وہ تن من دھن سے کام کریںگے۔ انہوںنے کہا کہ وہ اس بار الیکشن نہیں لڑیںگے چونکہ وہ 75سال کراس کرچکے ہیں ،البتہ اپنے کارکنان کو ٹکٹ دلائیں گے اور این ڈی اے کوتاریخ ساز کامیابی سے ہم کنار کرانے میں وہ پیچھے نہیں رہیںگے۔انہوں نے یہاں تک کہا کہ جے ڈی یو میںان کا آنا آب حیات جیسا ہے۔امید کی جارہی ہے کہ انہیں 10سے 12سیٹیں مل سکتی ہیں ،ساتھ ہی وہ خود راجیہ سبھا یا بہار قانون ساز کونسل کے رکن بن سکتے ہیں۔