بہارحکومت کااہم فیصلہ،انجینئرنگ اورمیڈیکل کالجوں میں 33فی صدنشستیں لڑکیوں کے لیے مخصوص

پٹنہ :نتیش حکومت نے بہار میں لڑکیوں کی تعلیم کے حوالے سے اہم اعلان کیا ہے۔ ریاست کی نتیش حکومت نے اعلان کیا ہے کہ بہار کے انجینئرنگ اور میڈیکل کالجوں میں لڑکیوں کے لیے 33 فی صد نشستیں مخصوص ہوں گی۔ بدھ کے روز وزیراعلیٰ نتیش کے سامنے ویڈیو کانفرنسنگ کے ذریعے انجینئرنگ اور میڈیکل کالجوں کے قیام سے متعلق مجوزہ بل کی پریزنٹیشن بھی دی گئی۔سکریٹری ، محکمہ سائنس اور ٹکنالوجی ، لوکیش کمار سنگھ نے ایک پریزنٹیشن کے ذریعہ دی بہار انجینئرنگ یونیورسٹی ایکٹ -2021 اور دیگر دفعات کے بارے میں تفصیلی معلومات دیں۔ محکمہ صحت کے ایڈیشنل چیف سکریٹری پرتیایا امرت نے بتایاہے کہ پریزنٹیشن کے ذریعہ بہار یونیورسٹی آف ہیلتھ سائنسز اور یونیورسٹیوں کے پاور اینڈ فنکشن ، جیوریڈیشن اور دیگر دفعات کے بارے میںبات کی گئی ہے۔اس دوران وزیراعلیٰ نتیش کمار نے کہاہے کہ انجینئرنگ یونیورسٹی اور میڈیکل یونیورسٹی کے قیام سے انجینئرنگ کالجوں اور میڈیکل کالجوں کا بہتر انتظام کیا جائے گا۔ اس کے ساتھ کالجوں میں تدریسی کام کو بھی بہتر طور پر کنٹرول کیا جاسکتا ہے۔وزیراعلیٰ نے کہاہے کہ ریاست کے انجینئرنگ اور میڈیکل کالجوں میں اندراج میں کم از کم ایک تہائی نشستیں طالبات کے لیے مخصوص ہوں۔اس سے طالبات کی تعداد میں اضافہ ہوگا۔یہ ایک انوکھی چیزہوگی۔انہوں نے کہاہے کہ ریاست کے تمام اضلاع میں انجینئرنگ کالج کھولے جارہے ہیں۔بہت سے میڈیکل کالج بھی کھولے گئے ہیں۔ ہمارا مقصد یہ ہے کہ بہار کے بچوں اور لڑکیوں کو انجینئرنگ اور میڈیسن کی تعلیم حاصل کرنے کے لیے باہر نہ جانا پڑے۔