بھارت ، بنگلہ دیش نے سات معاہدے پردستخط کیے ، سرحد پار سے ریل رابطے کی بحالی

نئی دہلی / ڈھاکہ:وزیر اعظم نریندر مودی نے جمعرات کے روز بنگلہ دیش کوپڑوسی فرسٹ پالیسی کا ایک اہم ستون قرار دیتے ہوئے جمعرات کے روز کہاہے کہ بنگلہ دیش کے ساتھ تعلقات کو مضبوط اور گہرا کرنا ان کی خصوصی ترجیح رہی اورکوویڈ 19کے درمیان دونوں ممالک کے مابین اچھا تعاون رہاہے۔مودی نے یہ بات بنگلہ دیش کی ہم منصب شیخ حسینہ کے ساتھ ایک آن لائن سربراہی اجلاس میں کہی۔ دونوں ممالک کے مابین تیزی سے بڑھتے ہوئے تعاون کی مناسبت سے ہندوستان اور بنگلہ دیش نے ہائیڈرو کاربن ، زراعت ، ٹیکسٹائل اور معاشرتی ترقی جیسے متعدد شعبوں میں سات معاہدوں پر دستخط کیے۔ اس کے ساتھ ہی سرحد پار چیلہاٹی – ہلدیبری ریل لائن کو بحال کردیا گیا جو 1965 سے معطل چل رہا تھا۔امید کی جا رہی ہے کہ چہاٹی-ہلدیبری ریل رابطے کی بحالی سے آسام اور مغربی بنگال سے بنگلہ دیش تک رابطے کو فروغ ملے گا۔ یہ کولکاتہ اورسلی گوڑی کے مابین 1965 تک مرکزی براڈ گیج لنک کاایک حصہ تھا۔مودی اور حسینہ نے مشترکہ طور پر بنگلہ دیش کے بانی مجیب الرحمن اور مہاتما گاندھی پر ڈیجیٹل نمائش کا افتتاح کیا۔اس موقع پر وزیر اعظم نریندر مودی نے کہاہے کہ بنگلہ دیش ہماری پڑوسی فرسٹ پالیسی کا ایک اہم ستون ہے۔پہلے دن سے ہی بنگلہ دیش کے ساتھ تعلقات کو مضبوط اور گہرا کرنے کی خصوصی ترجیح رہی ہے۔انہوں نے کہاہے کہ یہ سچ ہے کہ عالمی وباکی وجہ سے یہ سال مشکل رہا ہے۔ لیکن یہ اطمینان کی بات ہے کہ اس مشکل وقت کے دوران ہندوستان اور بنگلہ دیش کے مابین اچھا تعاون رہا۔مودی نے کہاہے کہ چاہے یہ دواؤں کی بات ہو یا طبی آلات یا طبی پیشہ ور مل کر کام کریں ، ہمارا تعاون اچھا رہا ہے۔ ویکسین کے میدان میں بھی ہمارااچھاتعاون ہے۔ اس سلسلے میں ہم آپ کی ضروریات کا بھی خاص خیال رکھیں گے۔ اسی کے ساتھ ہی بنگلہ دیش کی وزیر اعظم شیخ حسینہ نے کہا ہے کہ ہندوستان ایک سچادوست ہے۔شیخ حسینہ نے کہاہے کہ میں نے کوویڈ 19 کے ساتھ بھارت کے معاملات کی تعریف کی۔ میں امید کرنا چاہتی ہوں کہ ہندوستان عالمی معیشت میں بہتری لانے میں اہم کردار ادا کرے گا۔دوسری طرف وزیراعظم مودی نے کہا ہے کہ ہم نے زمینی سرحد کے کاروبار میں رکاوٹیں کم کردی ہیں۔دونوں ممالک کے مابین رابطے کو بڑھایا گیا اور نئے ذرائع کو شامل کیا گیا۔ یہ سب ہمارے تعلقات کومزید مستحکم کرنے کے ہمارے ارادوں کی عکاسی کرتاہے۔

    Leave Your Comment

    Your email address will not be published.*