بنگال شکست پر بی جے پی کے سینئر لیڈر نے کیلاش وجے ورگیہ کو گھیرا،کہا-ترنمول کانگریس کے ’کچرے‘کوٹکٹ دیاگیا

کولکاتہ:بنگال میں بی جے پی کی شکست پر میگھالیہ اور تریپورہ کے سابق گورنر اور بی جے پی کے سینئر رہنما تتھاگت رائے نے سخت بیان دیا ہے۔ انہوں نے کہاہے کہ کیلاش وجے ورگیہ ، بنگال بی جے پی کے صدر دلیپ گھوش اور بی جے پی کے دیگر رہنماؤں نے وزیر اعظم نریندر مودی اور وزیر داخلہ امیت شاہ کو کیچڑ میں گھسیٹا ہے۔ دنیاکے سامنے سب سے بڑی پارٹی کا نام بدنام ہوگیا۔تھاگت رائے نے کہاہے کہ ان ہی رہنماؤں نے بنگال کے بی جے پی انتخابی صدر دفاتر اور 7 اسٹار ہوٹلوں میں بیٹھ کرترنمول سے آنے والے کوڑے کوٹکٹ بانٹ دیے۔ اب جب کارکنوں کا غصہ پھیل رہا ہے تو وہ ابھی بھی وہیں بیٹھے طوفان کے گزرنے کے منتظرہیں۔ ان لوگوں نے پارٹی کے نظریہ اور 1980 کے بعد سے پارٹی کے خدمت کرنے والے حقیقی رضاکاروں کے امیج پر سخت تنقید کی ہے۔بنگال میں انتخابات کے بعد ہونے والے تشددپر انہوں نے کہا ہے کہ اب جب بی جے پی کارکنان ترنمول کے جبر کا شکار ہو رہے ہیں ، تو یہ کیلاش،دلیپ،شیووندوادھیکاری انہیں بچانے کے لیے نہیں جارہے ہیں۔ یہ لوگ یہ تک نہیں پوچھ رہے ہیں کہ کارکنان ترنمول کے کارکنوں کے خلاف لڑیں۔ یہ لوگ صرف اس حقیقت سے راحت حاصل کرنے کی کوشش کر رہے ہیں کہ بی جے پی کی تعداد 3 سے 77 ہو گئی ہے۔انھوں نے کہاہے کہ غریب ، مایوس اور خود غرض لوگوں کا ایسا گروپ جس میں سیاسی تفہیم نہیں ہے ، نہ اس کا اندازہ لگانے کی صلاحیت رکھتے ہیں اور نہ ہی بنگالی حساسیت کا کوئی احساس رکھتے ہیں۔ آٹھویں جماعت تک تعلیم حاصل کرنے والوں سے کوئی کیا توقع کرسکتا ہے؟