بزم صدف انٹرنیشنل کویت چیپٹر کے زیر اہتمام ”خلیجی ممالک میں اردو کا دبستان“ کے عنوان سے کانفرنس کا انعقاد

دہلی:(سمیعہ ناز ملک)معروف بین الاقوامی علمی ادبی تنظیم ” بزمِ صدف انٹرنیشنل کے زیر اہتمام کویت چیپٹر کی جانب سے پانچ فروری دو ہزار اکیس کو یادگار اور تاریخی بین الا قوامی سیمینار ( خلیج اردو کانفرنس) کا انعقاد کیا گیا جس کا عنوان ” خلیج اردو کا نیا دبستان تھا “ ،کانفرنس میں پروفیسر صفدر امام قادری کی چار کتب ”روشن ہے ریگزار“، ”بنگلا دیش کو میں نے دیکھا“ ، ”میرے والدین“ اور”جانے پہچانے لوگ“ کا اجرا بھی کیا گیا۔ کانفرنس کا افتتاح ممتاز دانشور اور بزم صدف کے روح رواں و چیٸر مین جناب شہاب الدین احمد نے کیا۔ صدارت ممتاز شاعر، ادیب، ماہر انتقادیات، ڈاٸرکٹر و دانشور پروفیسر صفدر امام قادری نے کی جب کہ مہمانِ خصوصی پروگرام ڈاٸرکٹر جناب احمد اشفاق تھے۔ مہمانانِ اعزازی میں جناب مہتاب قدر سعودی عرب، جناب عارف انوارالحق عمان اور جناب احمد عادل بحرین تھے۔ نظامت کے فراٸض محترمہ عاٸشہ شیخ عاشی متحدہ عرب امارات نے بہ حسن و خوبی انجام دیے۔ تلاوت کلام مجید کی سعادت جناب مسعود حساس صدر کویت چیپٹر نے حاصل کی۔ کانفرنس میں جناب ڈاکٹر وصی الحق وصی قطر، جناب وقار احمد قطر، جناب اطہر عباسی سعودی عرب، جناب نعیم جاوید سعودی عرب، جناب گوہر نقوی عمان، جناب طفیل احمد عمان، جناب اظہار الحق بحرین، جناب ریاض شاہد بحرین، جناب احیإ الاسلام بھوجپوری دوبٸی، محترمہ شاہ جہاں جعفری کویت اور جناب شاداب الفت دوبٸی نے عالمی سطح کے پرمغز مفصل تحقیقی مقالے پیش کر کے خوب داد سمیٹی۔
ممتاز دانشور اور بزم صدف کے روحِ رواں و چیٸر مین جناب شہاب الدین احمد نے کانفرنس سے خطاب کرتے ہوٸے کہا کہ آج کا دن اس لحاظ سےقیمتی اور اہم ہے کہ بزم صدف کے زیرِاہتمام ایک تاریخی پروگرام میں یک جا ہوۓ ہیں جس کے خواب کٸی نسلوں نے دیکھے مگر تعبیر منازل سے دور رہیں۔ ہم نے بھی عرصہ دراز مختلف انواع کی سرگرمیاں جاری رکھیں مگر اللہ کریم نے آج کی شام ہمارے لیے محفوظ رکھی۔اس سلسلہ میں ہم بارگاہِ الہی میں خصوصی طور پر ہدیہ تشکر پیش کرتے ہیں جس نے بزم صدف کےپلیٹ فارم پر اہم ادبی مراکز اور اردو سے محبت کرنے والے احباب کو مجتمع کر دیا۔ بزم صدف کی کارکرگی میں واقعتاّّ اس کانفرنس کو سنگ میل قرار دیا جاٸے گا۔ انہوں نے کہا کہ دنیا بھر کے اردو ادبی حلقوں میں مباحث ہوتی رہی ہیں کہ ہند و پاک کے بعد اردو کا سب سے روشن اور قابلِ اعتبار ادبی مرکز کون سا ہے؟ امریکہ اور یورپ کے مختلف ممالک میں گزشتہ دو دہاٸیوں سے اردو کٕی چھوٹی بڑی بستیاں آباد ہیں۔جہاں سے اخبارات و جراٸد تواتر سے شاٸع ہوتے رہے ہیں جب ک سیمنار اور مشاعروں سمیت دیگر تقریبات کا انعقاد بھی طویل مدت سے ایک تسلسل سے دیکھنے کو مل رہا ہے۔ وہاں کی اعلیٰ درسگاہوں میں اردو کے طلبإ اور اساتذہ نظر آتے ہیں جب کہ وہاں نہ صرف تحقیقی ادب کی طرف توجہ رہی ہے بلکہ نقد و تحقیق کے لیے بھی لکھاریوں کی بڑی تعداد تخلیقی کام میں مشغول ہے۔ ان کا کہنا تھا کہ گزشتہ نصف صدی میں ہند و پاک سے خلیجی ممالک میں پہنچنے والے افراد شعرا و ادبا کی تعداد کم نہیں تھی۔ سعودی عرب، قطر، کویت، عمان، بحرین اور عرب امارات میں رفتہ رفتہ شاعروں ادیبوں کی جماعت اکٹھی ہوتی چلی گٸی یوں بہت سے اخبار و جراٸد اور گلف ایڈیشن شاٸع ہونے لگے۔سینکڑوں ادبی تنظیمیں منصہ شہود پر نمودار ہونے لگیں اور ہر ملک میں الگ الگ مختلف محافل مشاعرہ، ادبی تقریبات اور ادبی جشن منعقد ہونے لگے۔ ان تقریبات میں مقامی ادبا و شعرا کے با وصف تارکین وطن ہند و پاک کے قد آور شعرإ ادبا اور ماہر انتقادیات بھی شریک ہو کر خلیج کو ادبی وقار بخشنے لگے۔ مختلف خلیجی تنظیموں نے عالمی سطح پر شعرا و ادیبوں کو اعزازات دینے کا سلسلہ بھی شروع کیا جس سے اردو آبادی میں دھوم مچ گٸی۔ خلیجی ممالک میں مقیم لکھاریوں کی کتب شاٸع ہونے لگیں جس میں اردو کی تقریباّّ تمام اصناف شامل ہیں۔ ہند و پاک سے آنے جانے کا جو سلسلہ جاری رہا اس کی وجہ سے بھی بھی یہاں کے لوگوں کی کتب آسانی سے منظر عام پر آٸیں۔ اب تو خلیج میں بھی اردو کی کتب و رساٸل کی باضابطہ اشاعت کا سلسلہ چل نکلا ہے۔ جس سے خلیجی ممالک کے شعرا و ادبا کی سنجیدہ شناخت قاٸم ہوٸی۔ خلیج کے الگ الگ ملکوں میں اردو کی ادبی صورتحال پر توجہ دی جاٸے تو یہ جان کر دل باغ باغ ہو جاتا ہے کہ ہند و پاک سے معاشی ضرورتوں کے پیش نظر خلیجی ممالک میں آباد ہونے والوں نے اردو ادب کی خدمت کی جس کے نتیجہ میں یہاں کے مقامی عربی نژاد باشندوں میں بھی اردو زبان و ادب سے محبت اور لگاو پیدا ہوگیا ہے۔ اب ہماری فہرست میں کٸی ایسے شعرا ٕ وادبا موجود ہیں اگرچہ ان کی مادری زبان عربی ہے مگر وہ اردو ادب کے تخلیقی چراغ کو روشن کر رہے ہیں۔ یہ ہماری بے انتہا پر خلوص ادبی سرگرمیوں کا ہی اثر ہے کہ پورے خلیجی خطہ میں اردو کے لیے خوش گوار ماحول پیدا ہوا۔ ان کا کہنا تھا کہ خلیج کے ہر ملک میں درجنوں ادارے اور تنظیمیں مصروف عمل ہیں ان میں اگر کچھ تنظیموں کے چراغوں کی لو مدہم ہونے لگتی ہے تو نٸی ادبی تنظیموں کے چراغ جل اٹھتے ہیں یوں یہ سلسلہ قاٸم رہتا ہے۔ مگر اس کے ساتھ ساتھ نٸے مساٸل بھی جنم لیتے ہیں۔ یہ امر بھی واقع ہوا ہے کہ ہم سب نے اپنی اپنی ڈیڑھ اینٹ کی مسجدیں بھی بنا رکھی ہیں اور اکثر و بیشتر افراد یا ادارے اس حصار سے نکلنا بھی نہیں چاہتے جس کے باعث ہماری سرگرمیاں انہی دواٸر میں محدود ہو جاتی ہیں ہم یہ سر گرمیاں قاٸم تو رکھتے ہیں مگر ہم ربط باہمی اور اور باہمی مضبوطی اوراپنے کام کے داٸرے کو وسیع کرنے میں کام یاب نہیں ہو پاتے۔شاٸد یہی وجہ ہے کہ خلیج میں تخلیق کردہ ادب کے معیار اور مرتبہ کے بارے میں ابھی بھی ہند و پاک یا دیگر ممالک میں کوٸی خاص فکر مندی دکھاٸی نہیں دیتی۔ خلیج ادو کانفرنس منعقد کرنے کا اصل منتہا و مقصود بھی یہی ہے کہ خلیج کے الگ الگ ملکوں میں آباد ہمارے شعرا و ادبا کو ایک صفحہ پر لانا اشد ضروری ہے۔ بزم صدف نے یہ قدم اس لیے بڑھایا ہے کہ ہم تمام اداروں اور تنظیموں کے افراد اور مختلف اصناف میں خدمت سر انجام دینے وال فنکاروں کو مجمو عی شناخت دینے کے لیے ان کا دعویٰ پیش کر سکیں۔ ہمارے پاس سینکڑوں کتب کا سرمایہ اور نصف صدی سے زیادہ پر محیط ادبی سرگرمیاں دنیا میں پھیلے ہوۓ ادیبوں کے لیے کشش کا باعث ہیں۔ ہند و پاک اور امریکہ و یوروپ میں مقیم اردو ادیب خلیج کی ادبی سرگرمیوں سے جڑنا چاہتے ہیں مگر ایسے میں ہمیں بھی ایک متحدہ آواز بن کر دنیا کے سامنے آنا چاہیٸے۔ آج کی اس عہد ساز کانفرنس کا افتتاح کرتے ہوۓ میں آپ کو قبل از وقت مبارک باد دیتا ہوں کہ ہندوستان اور پاکستان کے بعد خلیج کو بہت جلد اردو کا تیسرا بڑا مرکز تسلیم کر لیا جاۓ گا۔ ہم اپنے ادبی معیار اور سرگر میوں کے باعث اس کے حق دار ہیں۔ ہمیں امید ہے کہ دنیا بھر کے ادیب شاعر خلیج کے ادب کی قدر شناسی کریں گے اور اسے بطور بڑے ادب کے پہچانیں گے۔ آج کے دن کرہ ارض پر پھلے ہوۓ بزم صدف کے اراکین اور خصوصاّ کویت چیپٹر کے سارے اراکین کو دل کی اتھاہ گہراٸیوں سے مبارک باد پیش کرتا ہوں کہ آپ نے تاریخ رقم کر ڈالی ہے۔
کانفرنس کے صدر صفدر امام قادری نے اپنے صدارتی خطبہ میں کہا کہ اردو سے ہماری نسبت ہمارے لیے باعث افتخار ہے آج کی یہ کانفرنس اردو ادب کی نٸ تاریخ رقم کرے گی۔ دیار غیر میں بسنے والے ہم سب اردو کے پاسبان ہیں۔ اردو ہماری مادری زبان ہے جس کی خدمت کرنا ہمارے لیے سعادت ہے میں بزم صدف کا ادنی سا کارکن ہوں اور آج کی اس یادگا محفل میں اپنی چار کتب کے اجرا پر بزم صدف کا متشکر و ممنون ہوں۔ آج کا موضوع مختصر، اہم اور اپنے اندر عظیم وسعت سمیٹے ہوۓ ہے۔ انھوں نے آج کی کانفرنس میں پیش کیے جانے والے مقالہ جات کو اہم قرار دیتے ہوۓ کہا کہ تمام مقالہ خوانوں نے پر مغز تحقیقی مقالے پیش کیۓ۔ اس کانفرنس کی اہمیت اس لحاظ سے بھی مختلف ہے کہ خلیجی ممالک کے ادبا و شعرا کے مقالوں سے موضوع کی نٸ جہتیں سامنے آٸی ہیں۔ ایک ایسے علاقے میں جو اردو کی بستی نہیں تھا کو اردو شعرا و ادبا نے نہ صرف آباد کیا بلکہ اس ریگزار میں شمعیں جلا کرخوشگوار ماحول پیدا کیا۔ جس کی بدولت آج یہاں تخلیق ہونے والے ادب کو ہندوستان اور پاکستان میں تخلیق ہونے والے ادب سے مماثل کیا جا سکتا ہے اور اسی فرق کو اس کانفرنس نے واضح کیا ہے۔ اردو زبان کے تارکین وطن نے اس بات کا ثبوت دیا ہے کہ خلیجی ممالک صرف پٹرول ہی پیدا نہیں کرتے بلکہ یہاں ادب کے سوتے بھی پھوٹتے ہیں۔ ان کا کہنا تھا کہ جہاں یہ بات خوش آٸند ہے کہ ہندوپاک کے بعد خلیجی ممالک میں آباد اردو کی بستیاں زرخیز ہیں وہاں یہ بات بھی قابل ذکر ہے کہ یہاں تخلیق ہونے والا ادب ان سے مختلف بھی ہے۔ انھوں نے بزم صدف کے چٸرمین جناب شہاب الدین اور کویت چیپٹر کے عہدیداران اور اراکین سمیت بزم صدف کے تمام کارکنوں کو تاریخی، خوبصورت، معیاری اور یادگار کانفرنس کے انعقاد پر مبارکباد پیش کی۔
اس سے قبل ممتاز ادیب جناب ڈاکٹر عامر قدواٸی نے حروف سپاس پیش کرتے ہوۓ کہا کہ اردو ایک زبان نہیں ہے بلکہ ایک منور تہذیب کا نام ہے۔ اردو ہندوستان کی بیٹی ہے جو یہیں پلی بڑھی اور یہیں اس پر شباب آیا۔ اور حسن و اخلاق کی مالکہ بنی کہ جو اس کے قریب آیا اور پھر اسی کا ہو گیا۔ جب بہار میں رنگ برنگے پھول کھلتے ہیں تو اس پر انواع واقسام کے کیڑے شہد کی مکھی اور اڑنے والے پتنگے آ بیٹھتے ہیں۔ یہ ننھے عاشق ایک سے دوسرے پھول پر پہنچتے رہتے ہیں اوراپنے پیروں کے ذریعہ ” پولن گرینز“ ایک جگہ سے دوسری جگہ منتقل کرتے رہتے ہیں جس کے سبب فرٹی لاٸی زیشن“ کا عمل وجود میں آتا ہے بالکل اسی طرح اردو پر بھی یہی مثال منطبق ہوٸی۔ حصول روزگار کے لیے نقل مکانی کرنے والے ہند و پاک سے ہجرت کر کے خلیج سمیت دیگر ممالک میں پہنچے اور اردو بھی اپنے ساتھ لے آٸے۔ اس طرح اردو کی نٸی بستیاں وجود میں آٸیں۔ ہجرت ہمیشہ فاٸدہ مند اور با برکت ثابت ہوتی ہے ۔اردو کے پرستاروں نے اس کا خیر مقدم کیا۔اردو نے دیار غیر میں بھی اپنے قدم جماۓ اور نشونما پاٸی۔ آج دنیا کا کوٸی بھی ملک ایسا نہیں ہے جہاں اردو بولنے والے نہیں۔ اردو کی تنظیمیں اپنے داٸرہ میں رہتے ہوۓ مصروف عمل ہیں اور اردو کی خدمت میں مشغول ہیں۔جس کے باعث آج اُردو پاٸندہ و تابندہ ہے۔ ضرورت اس امر کی ہے کہ ہم باہمی مشاورت اور اشتراک سے اردو کے فروغ کے لیے کام کریں۔