بجرنگ دل کے مواد پر پابندی لگانے کی ضرورت محسوس نہیں ہوئی ،فیس بک کی صفائی

 

نئی دہلی :فیس بک انڈیاکے چیف اجیت موہن نے بدھ کے روز پارلیمنٹ کی کمیٹی کو بتایاہے کہ سوشل میڈیا کمپنی کی حقائق تلاش کرنے والی ٹیم کو ایسا کوئی مواد نہیں ملاہے جس میں بجرنگ دل پرپابندی کی ضرورت ہو۔ ذرائع نے یہ اطلاع دی ہے۔موہن کانگریس کے لیڈر ششی تھرور کی سربراہی میںانفارمیشن ٹیکنالوجی سے متعلق پارلیمانی اسٹینڈنگ کمیٹی کے سامنے پیش ہوئے۔کمیٹی نے انہیں سول ڈیٹاسیکیورٹی کے معاملے پر طلب کیا۔موہن کے ساتھ فیس بک کے پبلک پالیسی کے ڈائریکٹر شیو ناتھ ٹھوکرال بھی تھے۔ذرائع نے بتایاہے کہ کانگریسی لیڈرکارتی چدمبرم نے ششی تھرورکے ساتھ مل کر موہن سے بجرنگ دل پر پابندی سے متعلق حالیہ وال اسٹریٹ جرنل کی رپورٹ کے بارے میں سوال کیا۔ انہوں نے کہاہے کہ ان سوالوں کے جواب میں موہن نے کمیٹی کے ممبروں کو بتایا کہ کمپنی کی حقائق تلاش کرنے والی ٹیم کوایسا کوئی مواد نہیں ملا جس میں بجرنگ دل پر پابندی عائد کرنے کی ضرورت ہو۔ وال اسٹریٹ جرنل کی رپورٹ میں کہا گیا ہے کہ بجرنگ دل پر پابندی کی داخلی جانچ کے باوجود فیس بک نے اپنے ملازمین کی مالی وجوہات اورسیکیورٹی خدشات کے سبب اس پرپابندی نہیں لگائی۔ذرائع نے بتایاہے کہ بی جے پی کے ممبرپارلیمنٹ نشی کانت دوبے نے پوچھاہے کہ اگر فیس بک کو بجرنگ دل کے حوالے سے سوشل میڈیاپالیسیوں کی خلاف ورزی نہیں ملی توفیس بک نے وال اسٹریٹ جرنل کی رپورٹ کو کیوں مستردنہیں کیااوراسے جعلی قرارنہیں دیا۔