اشوک چودھری کسی ایوان کے رکن نہیں،پھروزیربنانے کا رازکیاہے؟:تیجسوی یادو

پٹنہ:وزیرتعلیم میوہ لال کوہٹانے میں کامیابی کے بعداب تیجسوی یادونے بدعنوانی پرحملہ تیزکردیاہے۔وزیرتعلیم کاچارج اشوک چودھری کودیاگیاہے۔تیجسوی یادونے ٹویٹ کرکے کہا ہے کہ ایک بدعنوان وزیر تعلیم کو ہٹایا گیا اوراب ایک اور شخص کو وزیر تعلیم بنایا گیا ہے جس پر کروڑوں کے غبن کے لیے سی بی آئی تفتیش جاری ہے۔ نتیش جی کی کیامجبوری ہے کہ تعلیمی نظام کوبہتربنانے کی بجائے انہوں نے ایسے شخص کو وزیر بنا دیا جو کسی بھی ایوان کا ممبرنہیں ہے۔اس سے پہلے تیجسوی یادو نے کہاتھاکہ جے ڈی یو کے ایگزیکٹو چیئرمین اور وزیر مسٹر اشوک چودھری کی اہلیہ پربینک سے جعلسازی اور کروڑوں کے گھپلے کا الزام ہے، سی بی آئی تحقیقات کررہی ہے، عدالت میں ایک کیس ہے۔ ان کی ایمانداری کو دیکھیں توکہا جاتا ہے کہ بیوی کی بدعنوانی کوئی بڑی بات نہیں ہے۔جب وزیراشوک چودھری سے پوچھاگیاکہ آپ کی اہلیہ پر بینک فراڈ کا معاملہ ہے اور ان پرالزام عائد کیا جاتا ہے۔ سی بی آئی نے ان پر الزام عائد کیا تھا۔ کیس ابھی زیر سماعت ہے۔ تواس کے جواب میں اشوک چودھری نے کہاہے کہ ہم سپریم کورٹ جائیں گے۔