اپنی مادری زبان میں بات چیت کرنے پر فخر کا احساس ہوناچاہیے:نائب صدرجمہوریہ

نئی دہلی:نائب صدر جمہوریہ ایم وینکیا نائیڈو نے آج مختلف بھارتی زبانوں میں کلاسیکی ادبی تخلیقات کے ترجمے کی تعداد میں اضافے کے لیے فعال اور ٹھوس کوششوں کی اپیل کی۔ اس سلسلے میں انہوں نے علاقائی بھارتی ادب کی مالامال وراثت کو عوام کی مادری زبانوں میں فراہم کرانے کے لیے ترجمے میں جدید تکنالوجی سے فائدہ اٹھانے کا مشورہ دیا۔وینکیانائیڈونے خصوصی طور پر شری کرشن دیواریہ کے ’آمکت مالیہ دا‘ جیسی کلاسیکی تخلیق کا دیگر بھارتی زبانوں میں ترجمہ کرنے میں پوٹّی شری رامولّو تیلگو یونیورسٹی جیسے اداروں کی ستائش کی۔ انہوں نے بھارت میں مختلف زبانوں کے استعمال کو محفوظ کرنے اور بڑھاوا دینے کے لیے ایسی یونیورسٹیوں سے اس طرح کی مزید کوششوں کی اپیل کی۔تیلگو یونیورسٹی کے یوم تاسیس کے موقع پر منعقدہ تقریب سے خطاب کرتے ہوئے نائب صدر جمہوریہ نے مختلف تحقیقی پہل قدمیوں کے توسط سے تیلگو زبان ، ادب اور تاریخ کو محفوظ رکھنے کے لیے یونیورسٹی کی عہد بستگی کی ستائش کی۔ انہوں نے آندھرا پردیش کے سابق وزیر اعلیٰ آنجہانی این ٹی راماراو? کو خراج عقیدت پیش کیا، جنہوں نے یونیورسٹی کے قیام کے لیے پہل قدمی کی تھی۔انہوں نے یونیورسٹی کو ترقی دینے اور تیلگو زبان و ثقافت کے کاز کو مزید آگے بڑھانے میں تلنگانہ کی ریاستی حکومت اوروزیر اعلیٰ کے چندرشیکھر رائوکی کوششوں کی بھی ستائش کی ہے۔یہ دیکھتے ہوئے کہ عالم کاری کے اثرات بڑے پیمانے پر مرتب ہوئے ہیں، نائب صدر جمہوریہ نے زور دے کر کہا کہ اس امر کی لازمی طور پر یقین دہانی کی جانی چاہئے کہ نوجوان اپنے ثقافتی وراثت سے رابطہ بنائے رکھیں۔ شناخت قائم کرنے اور نوجوانوں میں خوداعتمادی کو فروغ دینے میں زبان کی اہمیت کو مدنظر رکھتے ہوئے وینکیا نائیڈونے کہا کہ لوگوں کو اپنی مادری زبان میں بات کرنے پر فخر کا احساس ہونا چاہئے۔وینکیانائیڈونے کہاہے کہ قومی تعلیمی پالیسی 2020 کا مقصد بھارتی زبانوں کو فروغ دینا اور پرائمری تعلیم کو بچوں کی مادری زبان میں فروغ دینے کے لیے ترغیب فراہم کرنا ہے۔ انہوں نے کہا کہ لازمی طور پر اعلیٰ تعلیم اور تکنیکی نصاب کے لیے بھی تعلیم کا وسیلہ مادری زبان ہی ہونی چاہیے۔اس سلسلے میں وینکیا نائیڈونے یونیورسٹیوں سے بھارتی زبانوں میں جدید تحقیق اور بھارتی زبانوں میں سائنسی اور تکنیکی اصطلاحات میں بہتری لانے کا سجھائو پیش کرنے کی اپیل کی ہے جس سے کہ ان کی دور تک رسائی اور تعلیم کے میدان میں اس کے استعمال کو آسان بنایا جا سکے۔اس موقع پر نائب صدر جمہوریہ نے شاعر اور نقاد ڈاکٹر کوریلا وٹّلاچاریہ اورکوچّی پوڈی رقص کے ماہر کلا کرشن کو ایوارڈ پیش کیے۔