انتخابی منشور میں زرعی قانون کا وعدہ کرنے والی کانگریس کیوں احتجاج کر رہی ہے؟:پرکاش جاوڈیکر

نئی دہلی:مرکزی حکومت کے زرعی قوانین کے خلاف کسانوں کے جاری احتجاج کے درمیان مودی حکومت بار بار ان قوانین پر اپنے موقف کا دفاع کررہی ہے۔ حکومت اپوزیشن پربھی بار بار سوالات اٹھا رہی ہے۔ منگل کو مرکزی وزیر پرکاش جاوڈیکر نے پھر وہی بات دہرائی۔ انہوں نے کہا کہ کانگریس نے اپنے 2019 کے منشور میں اسی قانون کو لانے کا وعدہ کیا تھا، تو اب وہ اس کی مخالفت کس طرح کر رہی ہے ؟ ۔ جاوڈیکر نے کہا کہ کسانوں نے قیمت میں اضافی قیمت کے معاوضے کا مطالبہ کیا تھا اور ہم انہیں خرچ سے 50 فیصد زیادہ دے رہے ہیں۔ کانگریس نے اپنے دور حکومت میں کسانوں کو کچھ نہیں دیا تھا۔ مودی جی دے رہے ہیں۔اس سے قبل پیر کو مرکزی وزیر روی شنکر پرساد نے بھی اس بارے میں اپوزیشن جماعتوں پر حملہ کیا تھا۔ انہوں نے کہا تھا کہ اپوزیشن زرعی قانون پر دوہرا رویہ دکھا رہی ہے۔ پیر کے روز پریس کانفرنس میں کہاتھاکہ آج جو ہماری حکومت نے کیا ہے یہ لوگ10 سال یہی کررہے تھے ۔ اپنی ریاستوں میں کر رہے تھے۔ کانگریس نے اپنے 2019 لوک سبھا انتخابی منشور کے صفحہ نمبر 17 کے پوائنٹ11 میں کہاتھا کہ وہ اے پی ایم سی کو ہٹا دے گی اور انٹرسٹیٹ تجارت کو مفت کرنے کا کام کرے گی۔