انجام ـ ڈاکٹر مشتاق احمد 

 

سرحدوں پر شعلہ بیانی

لباس و چہرے پر زہر فشانی

دھواں دھواں منظر دیکھ کر

آئینے سے آنکھ چرانے والے

چاہے دنیا کچھ بھی کہے

اپنے منہ میاں مٹھو بننے والے

دیکھ!

دھرتی ماں لال ہو رہی ہے

تیرتی ہوئی نعشوں سے

گنگا جمنا بدحال ہو رہی ہے

فضاؤں میں زہریلی گھٹن ہے

چہار سمت جلتا ہوا بدن ہے

اپنی اندھی آنکھوں سے اے ناداں

حالت چمن کی صبح و شام دیکھ

دیکھ ، اپنے کیے کا انجام دیکھ !

    Leave Your Comment

    Your email address will not be published.*