امریکا کا افغانستان سے فوج کے انخلا کا اعلان،طالبان کا خیرمقدم

کابل:افغان طالبان نے پنٹاگون کی جانب سے تقریباً 2 ہزار امریکی فوجیوں کو افغانستان سے واپس بلانے کے اعلان کا خیر مقدم کرتے ہوئے کہا ہے کہ یہ ایک اچھا قدم ہے جس سے ملک میں جاری طویل تنازع کے خاتمے میں مدد ملے گی۔خبر ایجنسی اے ایف پی کی رپورٹ کے مطابق پینٹاگون نے کہا ہے کہ صدر ڈونلڈ ٹرمپ کے بیرونی جنگوں کو ختم کرنے کے فیصلے پر عمل کرتے ہوئے 20 سالہ جنگ کے بعد افغانستان اور عراق سے اپنے فوجیوں کی تعداد کو کم کریں گے۔افغان طالبان کے ترجمان ذبیح اللہ مجاہد نے امریکی اعلان کا حوالہ دیتے ہوئے کہا کہ یہ ایک اچھا قدم ہے اور دونوں ممالک کے شہریوں کے مفاد میں ہے۔ ان کا کہنا تھا کہ ‘جتنی جلدی بیرونی فورسز واپس چلی جائیں گی اس قدر ہی جلد جنگ کا خاتمہ ہوگا۔دوسری جانب ناقدین نے امریکا کے اس فیصلے پر تشویش کا اظہار کرتے ہوئے کہا ہے کہ اس فیصلے سے طالبان کی حوصلہ افزائی ہوگی اور 2001 سے حاصل کی گئیں کامیابیوں کا خاتمہ ہوگا۔پنٹاگون کے اس فیصلے کے تحت 15 جنوری تک افغانستان سے 2 ہزار فوجیوں کا انخلا ہوگا جبکہ اس کے ایک ہفتے بعد نومنتخب صدر جو بائیڈن ممکنہ طور پر اپنا منصب سنبھال لیں گے۔افغانستان سے امریکی فوج کا انخلا ڈونلڈ ٹرمپ کی افغان سرزمین پر فوجی مداخلت کو ختم کرنے کے منصوبے کا حصہ ہے اور رواں برس 29 فروری کو طالبان کے ساتھ معاہدے میں اس پر اتفاق کیا گیا تھا۔ٹرمپ انتظامیہ نے مئی 2021 تک افغانستان سے تمام غیر ملکی فورسز کے انخلا کا معاہدہ کیا تھا۔معاہدے کے تحت طالبان نے وعدہ کیا تھا کہ وہ امریکی فورسز پر حملہ نہیں کریں گے اور القاعدہ اور داعش جیسی تنظیموں کو دوبارہ ابھرنے کا موقع نہیں دیا جائے گا۔جرمنی نے افغانستان سے امریکی فوجیوں کے تیزی سے انخلا کے فیصلے پر پریشانی کا اظہار کرتے ہوئے کہا ہے کہ اس سے امن کی کوششوں پر اثر پڑ سکتا ہے۔واضح رہے کہ شمالی افغانستان میں جرمنی کے سیکڑوں فوجی موجود ہیں۔ جرمنی کے وزیر خارجہ ہیکو ماس کا کہنا تھا کہ ہمیں تشویش اس بات پر ہے کہ امریکا کے اعلان سے افغانستان میں ہونے والے امن مذاکرات پر کیا اثر پڑ سکتا ہے۔ ان کا کہنا تھا کہ ہمیں ایسی اضافی رکاوٹیں کھڑی نہیں کرنی چاہیے، جو خاص طور پر افغانستان سے جلد بازی میں انخلا کے باعث ہوں گی۔افغان حکومت کے عہدیداروں نے امریکی فوج کے انخلا کے فیصلے کو جلد بازی قرار دیا جس کے تحت 15 جنوری کے بعد افغانستان میں امریکی فوجیوں کی تعداد 2 ہزار 500 تک محدود ہو جائے گی۔

    Leave Your Comment

    Your email address will not be published.*