عالمی سطح پر کرونا مریضوں کی اموات میں تین گنا اضافہ

لندن:تازہ ریسرچ نے بتایا کہ اسپتالوں میں داخل کورونا وائرس سے بیمار افراد کی اموات میں تین گنا اضافہ ہوا ہے۔ دوسری جانب اس وائرس کے خلاف مدافعت پیدا کرنے والی ویکسین کا استعمال امریکا، برطانیہ اور کینیڈا میں شروع ہو چکا ہے۔تازہ ریسرچ میں محققین نے فرانسیسی ڈیٹا سے نتائج اخذ کیے ہیں۔ اس ڈیٹا کے مطابق رواں برس مارچ اور اپریل میں کورونا وبا کی پہلی لہر کے دوران ہلاکتیں پینتالیس ہزارآٹھ سو انیس تھیں جبکہ دوسری لہر کے دوران حالیہ ہفتوں میں کورونا مریضوں کی اموات نواسی ہزار پانچ سو تیس تک پہنچ چکی ہیں۔ کورونا وائرس سے پھیلنے والی بیماری کووڈ انیس کا تقابل انفلوئنزا مرض سے کیا گیا ہے۔بھارت میں کووڈ انیس کے متاثرین کی تعداد قریب ایک کروڑ ریسرچ کے دوران دم توڑنے والے مریضوں کی شرح 16.9 فیصد ہے۔ دوسری جانب انفلوئنزا سے مرنے والے افراد کی اوسط شرح5.28 ہے۔ کووڈ انیس کے مریضوں کی انتہائی نگہداشت کی شرح 16.3 فیصد اور انفلوئنزا کے مریضوں کے لیے انتہائی نگہداشت کی شرح 10.8 فیصد ہے۔ کورونا مریضوں کا قیام انتہائی نگہداشت کی وارڈ میں انفلوئنزا کے مریض کے مقابلے میں دوگنا ہے۔ انفلوئنزا کے مریض کو سات سے آٹھ دن انتہائی نگہداشت درکار ہوتی ہے جب کہ کورونا وائرس کا مریض کم از کم سولہ دن آئی سی یو میں رکھا جاتا ہے۔امریکی فوڈ اینڈ ڈرگ ایڈ منسٹریشن (FDA) نے جمعرات کو ایک اور ویکسین کی ہنگامی استعمال کی اجازت دے دی ہے۔ یہ موڈیرنا دوا ساز کمپنی کی تیار کردہ ویکسین ہے۔ قبل ازیں فائزر اور بائیو این ٹیک کی ویکسین کی ہنگامی منظوری دی جا چکی ہے اور اس کا استعمال بھی شروع کر دیا گیا ہے۔ امریکہ میں کورونا میں مبتلا ہونے والے افراد کی تعداد ایک کروڑ چھہتر لاکھ سے زائد ہے اور ہلاکتیں تین لاکھ سترہ ہزار سے زائد ہیں۔ کولمبیا نے بھی مریضوں کی بڑھتی تعداد کی تصدیق کی ہے۔ اس ملک میں اسی وائرس کی لپیٹ میں آنے والوں کی تعداد چودہ لاکھ سے زائد ہے اور اموات انتالیس ہزار سے زیادہ ہیں۔پاکستانی شہروں میں کورونا وبا کی پھیلاؤ جاری ہے اور مریضوں کی کل تعداد ساڑھے چار لاکھ سے تجاوز کر چکی ہے۔ دوسری جانب ایشیائی ملکوں نے بھی ویکسین کے حصول کی کوششیں شروع کر دی ہیں۔ فلپائن نے پچیس ملین خوراکیں موڈیرنا اور ارکٹوروس تھیراپیوٹکس فارماسوٹیکل کمپنیوں سے خریدنے کا اعلان کیا ہے۔ فائزر اور بائیو این ٹیک نے اپنی ویکسین کو منظوری کے لیے جاپانی ریگولیٹری ادارے کو درخواست جمع کرا دی ہے۔ جاپان اس ویکسین کی ایک سو بیس ملین خوراکیں خریدے گا۔ جاپانی حکومت نے واضح کیا ہے کہ فائزر ویکسین کی خریداری اس کے مؤثر اور محفوظ ہونے کی بنیاد پر کی جائے گی۔جرمن ادارے رابرٹ کوخ انسٹیٹیوٹ کا کہنا ہے کہ جمعہ اٹھارہ دسمبر کی صبح تک کورونا وائرس کی لپیٹ میں آنے والے نئے مریضوں کی تعداد تینتیس ہزار سات سو ستتر ہے۔ جمعرات سے اٹھارہ دسمبر کی صبح تک آٹھ سو تیرہ افراد بیماری سے جانبر نہیں ہو سکے۔