مہاراشٹر:اجیت پوار کی یقین دہانی،حکومت مراٹھوں کو ریزرویشن دینے کی ہر ممکن کوشش کر رہی ہے

پونے:مہاراشٹرا کے نائب وزیر اعلی اجیت پوار نے کہا کہ ریاستی حکومت دیگر برادریوں کو دئے جانے والے ریزرویشن میں چھیڑ چھاڑ کئے بغیر مراٹھوں کو ریزرویشن فراہم کرنے کی ہر ممکن کوشش کر رہی ہے۔ پوار کا یہ تبصرہ ہائی کورٹ کے ریٹائرڈ جج دلیپ بھوسلے کی سربراہی میں بنی کمیٹی کے اپنی رپورٹ میں سفارش کرنے کے دو دن بعد سامنے آیا کہ مہاراشٹرا حکومت سپریم کورٹ کے فیصلے کے خلاف نظرثانی کی درخواست دائر کرے گی۔پوار 1674 میں شیواجی مہاراج کی چھترپتی کے طور پر تاجپوشی کی برسی کے موقع پر پونے ضلع پریشد کے دفتر میں صحافیوں سے گفتگو کررہے تھے۔ مہاراشٹرا کی حکومت نے بلدیاتی اداروں، اسکولوں، کالجوں اور مکانات کی چھت پر ’گڈی‘لگا کر تاجپوشی کے دن کو شیو سوراج کے طور پر منانے کا فیصلہ کیا ہے۔پوار نے کہاکہ ہم مراٹھا برادری کو ریزرویشن دینے کے لیے وزیر اعلی ادھو ٹھاکرے کی قیادت میں ہر ممکن کوشش کر رہے ہیں، جسے سپریم کورٹ نے ختم کردیا ہے۔ انہوں نے کہا کہ سپریم کورٹ نے ایم سی گایکواڑ کمیشن کی رپورٹ پر سوالات اٹھائے تھے، جو کہ مراٹھا ریزرویشن پر مبنی تھی لیکن کچھ لوگ اب بھی عوامی جذبات کو بھڑکانے کی کوشش کر رہے ہیں۔
پوار سابق کونسلر نریندر پاٹل کے بیان پر ایک سوال کا جواب دے رہے تھے۔ پاٹل نے کہا تھا کہ ان جیسے سچے مراٹھا خاموش نہیں رہیں گے اور اگر ضرورت پڑی تو وہ اپنے جسم میں بم لگائیں گے اور ریزرویشن کی خاطر اس میں دھماکہ کردیں گے۔ نائب وزیراعلی نے کہاکہ اس موقع پر میں لوگوں، خاص طور پر مراٹھا برادری کے لوگوں کو یہ یقین دلانا چاہتا ہوں کہ ایم وی اے حکومت دیگر برادریوں کے ریزرویشن سے چھیڑچھاڑ کیے بغیر مراٹھوں کو ریزرویشن کی فراہمی کو یقینی بنانے کی کوشش کر رہی ہے۔