اے میری قوم!- صادق طاہر قاسمی ندوی

 

اے مری قوم کے جانثارو، اٹھو

عزم و ہمت کے پیکر جوانوں اٹھو

 

قوم کی بیٹیوں کی پکاریں سنو

درد سے چیختی ان کی آہیں سنو

غیرتِ قوم تیری کہاں کھو گئی

اپنے ایمان کی داستانیں سنو

 

اے محمد کے سارے دیوانوں اٹھو

اے مری قوم کے جانثارو اٹھو

 

اے مری قوم کے رہنماؤ اٹھو

اہل مسند اٹھو، خانقاہو اٹھو

فکری دانشکدو، درسگاہو اٹھو

دین اسلام کے اے جیالو اٹھو

 

قومیت کے حسیں ماہپارو اٹھو

اے مری قوم کے جانثارو اٹھو

 

فرقہ بندی کی آؤ حدیں توڑ دیں

آؤ نفرت کی ساری جڑیں توڑ دیں

وقت وحالات کا سارا رخ موڑ دیں

دشمنی کے چلو سارے بت توڑ دیں

 

آؤ توحید کے باغبانو اٹھو

اے مری قوم کے جانثارو اٹھو

 

قوم کی ڈوبتی کشتیوں کو بچا

پیکر حسن کی بیٹیوں کو بچا

گلشنِ زندگی کے حسیں موڑ پر

حسن کی سب حسیں تتلیوں کو بچا

 

ملت ہند کے پاسبانو اٹھو

اے مری قوم کے جانثارو اٹھو

 

آؤ شام و سحر کی فضاؤ اٹھو

رقص کرتی حسیں اے بہارو اٹھو

مہر وماہ وفلک، کہکشاؤ اٹھو

آبشاروں اٹھو، کوہسارو اٹھو

 

صبح دم،شام کے سب نظارو اٹھو

اے مری قوم کے جانثارو اٹھو

 

اپنے حق کی چلو سب لڑائی لڑو

اب نہ ہاتھوں کو رنگ حنائی کرو

توڑ دو فرقہ بندی کے بت توڑ دو

اب نہ آپس میں کوئی لڑائی لڑو

 

اے محبت کے سب آشیانو اٹھو

اے مری قوم کے جانثارو اٹھو

 

کوئی منصف، مسیحا، نہ غم خوار ہے

گونگی بہری ہماری یہ سرکار ہے

آؤ مل کر بنائیں نیا کارواں

قافلہ تو ہی ہے، تو ہی سالار ہے

 

قوم مظلوم کے غم گسارو اٹھو

اے مری قوم کے جانثارو اٹھو

 

زہر نفرت کا گھلتا چلا جائے گا

پیار دل سے نکلتا چلا جائے گا

گلشنِ زندگی کو سنوارو ذرا

پھول نفرت کا اگتا چلا جائے گا

 

اے محبت کے نغمہ نگارو اٹھو

اے مری قوم کے جانثارو اٹھو

 

ہر طرف تیری عظمت کی ہے داستاں

رشک کرتے ہیں تجھ پر زمیں، آسماں

ابن قاسم ہو، طارق، سعد ہو تمہیں

پھر بلاتا ہے تم کو وہی کارواں

 

اپنی تاریخ کے شاہپارو اٹھو

اے مری قوم کے جانثارو اٹھو

 

سب اٹھو عالمو، حافظو، شاعرو

عزم و ہمت کی اے تیز تر آندھیو

اہل فن، اہل فکر و نظر، ساتھیو

اے سمندر کے خاموش تر ساحلو

 

اے صحافت کے زندہ ستارو اٹھو

اے مری قوم کے جانثارو اٹھو

 

رنگ نور سحر، چاند تارو اٹھو

چاندنی رات کے اے اجالو اٹھو

دشت و صحرا کے سب ریگزارو اٹھو

اور زنداں کی ساری سلاخو اٹھو

 

اے محبت کی سب رزمگاہو اٹھو

اے مری قوم کے جانثارو اٹھو

 

جان دے کر لہو سے ہے سینچا چمن

یہ ہمارا وطن ہے، ہمارا وطن

آؤ صادق بھلا دیں ہر اک دشمنی

بھر دیں پیار ومحبت سے کوہ ودمن

 

اب عزیمت کے اے شہ سواروں اٹھو

اے مری قوم کے جانثارو اٹھو

    Leave Your Comment

    Your email address will not be published.*