آگرہ میں کورونا سے متعلق پرینکا گاندھی کا ٹویٹ،ڈی ایم نے نوٹس بھیجا

آگرہ:کانگریس کی جنرل سکریٹری پرینکا گاندھی کے ٹویٹ پر ہنگامہ ہوگیا ہے۔ آگرہ میں کورونا کی وجہ سے اموات سے متعلق ان کے ٹویٹ نے ریاستی حکومت میں ہلچل مچا دی۔ صرف یہی نہیں آگرہ کے ضلعی مجسٹریٹ نے یہ ٹویٹ گمراہ کن قرار دیتے ہوئے انہیں نوٹس بھیجا ہے۔ کانگریس رہنما پرینکا گاندھی نے ایک اخباری رپورٹ کے حوالے سے بتایا ہے کہ آگرہ میں گزشتہ 48 گھنٹوں میں 28 اموات ہوچکی ہیں۔ صرف یہی نہیں اس نے آگرہ کا رول ماڈل ہونے پر بھی طنز کیا ۔اس ٹویٹ پر ریاستی حکومت کی سطح پر سنسنی پھیل گئی۔ ادھر پیر کے روز آگرہ کے ڈی ایم نے کہا کہ مارچ کے بعد سے آگرہ سے 79 اموات ہوچکی ہیں۔ اخبار میں شائع ہونے والی خبریں غلط ہیں۔ معاملہ یہیں نہیں رکا۔ سرخیوں میں آتے ہی پرینکا کا ٹویٹ اخباروں میں چھا گیا۔ ڈی ایم آگرہ نے منگل کی صبح پرینکا گاندھی کو نوٹس جاری کیا ہے۔ نوٹس میں کانگریس کے جنرل سکریٹری پرینکا گاندھی سے کہا گیا ہے کہ وہ ٹویٹ کے ذریعے پوسٹ کی گئی خبروں کی تردید کریں۔ ڈی ایم نے لکھا ہے کہ کورونا سے لڑنے والی ٹیم کے حوصلے پست کرنے کی کوشش کی گئی ہے۔کانگریس کی جنرل سکریٹری نے ایک ٹویٹ میں لکھا ہے کہ آگرہ میں داخل 28 کورونا مریضوں کی 48 گھنٹوں میں موت ہوگئی۔ یوپی حکومت کے لئے کتنی شرم کی بات ہے کہ اس ماڈل کے جھوٹے پروپیگنڈے سے حقیقت کو دبانے کی کوشش کی گئی۔ حکومت کی ’نو ٹیسٹ، نوکورونا‘پر سوالات تھے لیکن حکومت نے اس کا جواب نہیں دیا۔