افسران یوگی کے احکامات کوسنجیدگی سے نہیں لیتے،اوریاحادثہ یوپی سرکارکے تغافل کانتیجہ

لکھنؤ:اتر پردیش کے اوریا ضلع میں ہفتے کی صبح ہوئے سڑک حادثہ میں 24 مزدوروں کی موت ہو گئی۔ 36 افراد زخمی ہو گئے۔اس سڑک حادثے کو لے کر سیاسی جماعتوں نے حکومت کوگھیراہے۔ایک طرف جہاں سیاستدان اس واقعہ پر افسوس جتا رہے ہیں وہیں اترپردیش حکومت کواس واقعے کے لیے مجرم بھی ٹھہرا رہے ہیں۔حادثے کو لے کر یوپی کے سابق وزیراعلیٰ اکھلیش یادو، سابق وزیراعلیٰ مایاوتی اور کانگریس کی جنرل سکریٹری پرینکا گاندھی نے بھی ٹوٹ کرکے یوپی کی یوگی حکومت کو جم کر نشانہ بنایاہے۔اکھلیش یادو نے اس واقعہ کے بعدکہاہے کہ خاموشی اختیار کرنے والے لوگ اور ان کے حامی دیکھیں کب تک اس غفلت کومناسب ٹھہراتے ہیں۔ایسے حادثے موت نہیں قتل ہیں۔بی ایس پی سپریمو مایاوتی نے پورے نظام پر سوال کھڑے کیے ہیں۔انہوں نے کہاہے کہ کل ہی وزیراعلیٰ نے یوپی میں آنے یا ریاست سے گزرنے والے مزدوروں کے کھانے، آنے جانے اور ٹھہرنے کے مناسب انتظامات کے لیے حکام کو ہدایت کی ہے۔یہ بدقسمتی کی بات ہے کہ حکام کی طرف سے وزیر اعلیٰ کی ہدایات کو سنجیدگی سے نہیں لیا جا رہا ہے، جس کی وجہ سے بڑا حادثہ ہوا۔میں وزیراعلیٰ سے ان افسران کے خلاف کارروائی کرنے کا مطالبہ کرتی ہوں، جنہوں نے اپنی ذمہ داریوں کو پورا نہیں کیاہے۔ اس حادثے میں ہلاک اور زخمی ہوئے لوگوں کے خاندانوں کو مالی مدد دی جانی چاہیے۔میں سوگوار خاندانوں کے تئیں تعزیت کا اظہار کرتی ہوں۔