افغانستان کی مددکے لیے دیگر اسٹیک ہولڈرز کے ساتھ ہم آہنگی کے لیے تیارہیں:بھارت

نیویارک:بھارت نے اقوام متحدہ کی سلامتی کونسل (یو این ایس سی) سے کہا ہے کہ وہ افغانستان کے لوگوں کو فوری امداد کی فوری فراہمی کو ممکن بنانے کے لیے دیگراسٹیک ہولڈرز کے ساتھ رابطہ قائم کرے گا۔بھارت نے خطے کے دیگر ممالک سے اپیل کی کہ وہ مل کر کام کریں اوراپنے مفادات سے بالاتر ہو کرکام کریں ۔اقوام متحدہ میں بھارت کے مستقل نمائندے ٹی ایس ترومورتی نے افغانستان میں اقوام متحدہ کے امدادی مشن (یو این اے ایم اے)پریواین ایس سی سے خطاب کرتے ہوئے کہاہے کہ بھارت نے بین الاقوامی برادری کی اس اپیل کی حمایت کی ہے کہ افغانستان کی انسانی امداد تک رسائی براہ راست ہے اور اسے بغیر کسی رکاوٹ کے ہوناچاہیے۔انہوں نے کہاہے کہ بھارت ایک بار پھر افغانستان کے لوگوں کو خوراک اور ادویات سمیت فوری انسانی امداد فراہم کرنے کے لیے تیارہے۔بھارت افغانستان کے لوگوں کو انسانی امداد فراہم کرنے کے اپنے عہد پر قائم ہے۔ہم بین الاقوامی برادری اور خطے کے ممالک سے اپیل کرتے ہیں کہ وہ متحد ہو جائیں اور اپنے اپنے مفادات سے اوپراٹھیں۔انہوں نے کہاہے کہ افغانستان کی ترقی میں سب سے بڑے علاقائی شراکت دار کے طور پر، ہندوستان افغان عوام کے لیے انتہائی ضروری امدادکی فراہمی کو تیز کرنے کے لیے کام کرنے کے لیے دوسرے اسٹیک ہولڈرز کے ساتھ ہم آہنگی کا منتظرہے۔ترومورتی نے کہاہے کہ انسانی امداد غیر جانبداری، انصاف پسندی اور آزادی کے اصولوں پر مبنی ہونی چاہیے اوریہ امدادبغیرکسی امتیازکے تقسیم کی جانی چاہیے اور ہر برادری یا ہر سیاسی نظریے کے لوگوں کو فراہم کی جانی چاہیے۔انہوں نے کہاہے کہ افغانستان میں پہلے ہی بہت خونریزی ہو چکی ہے اور حالیہ برسوں میں تشدد اور موجودہ انسانی بحران خوفناک ہے۔بھارت نے گزشتہ ہفتے افغانستان پردہلی ریجنل سیکورٹی ڈائیلاگ کی میزبانی کی ہے جس میں روس، ایران، قازقستان، کرغزستان، تاجکستان، ترکمانستان اور ازبکستان نے شرکت کی۔