آس کے باغ میں ناچتا ہے مگن مور آواز کا ـ نینا عادل 

 

شہد ہے وقت کے نقرئی جار میں

ذائقے دار ہے رات کی امرِتی

فصل گندم کی تیار ہے!

بھوک ہے

من کی وحشی دِواروں سے چمٹی ہوئی زرد رُو اشتہا!

سبز ہونے کو بے تاب ہے بے طرح

سر پٹکتی ہے سانسوں میں پیاسی ہوا

آؤ نا، آؤنا

آؤ نا

لاؤ نانِ جویں خلوتِ خاص میں

خواب کی سرخ مے اور چھلکاؤ نا!

آؤ نا

آس کے باغ میں ناچتا ہے مگن مور آواز کا

دھن دھنا دھن دھنا، دھن دھنا دھن دھنا

آؤ نا، آؤ نا

کتنی منہ زور ہے چاہ تکمیل کی

چاٹتی ہے لہو بے طر ح تشنگی

اس دھندلکے میں لپٹا ہوا اک یقیں!

اک گماں!!

نظم ہو؟ گیت ہو؟ جوئے تخلیق ہو؟

تلخ لذّت میں ڈوبا ہوا حرف ہو؟

جو بھی ہو!!

پاٹنا ہے تمھیں ایک اندھا خلا

آؤ نا

آؤ نا

    Leave Your Comment

    Your email address will not be published.*