آکسیجن کی ذخیرہ اندوزی؟ ’آپ‘ ایم ایل اے کو ہائی کورٹ نے کیا طلب

نئی دہلی :دہلی ہائی کورٹ نے جمعہ کے روز عام آدمی پارٹی کے ایم ایل اے اور دہلی حکومت کے وزیر عمران حسین کو نوٹس جاری کرتے ہوئے آکسیجن کی مبینہ ذخیرہ اندوزی کرنے اور عوام میں تقسیم کرنے کے تناظر میںجواب طلب کیا ہے۔ ان الزامات کو سنجیدگی سے لیتے ہوئے دہلی سرکار سے بھی ہائی کورٹ نے جواب بھی طلب کیا ہے۔ ہفتہ کو کیس میں سماعت کے دوران آپ کے ایم ایل اے عمران حسین کو نجی طور پر پیش ہونے کا حکم دیاگیا ہے۔دہلی ہائی کورٹ نے عمران حسین کو آکسیجن سلنڈروں کے غیر قانونی ذخیرہ اندوزی سے متعلق درخواست پر نوٹس جاری کیا۔ ہائی کورٹ کا کہنا ہے کہ کل عمران حسین عدالت میں پیش ہوں۔بنچ نے کہا ہے کہ دیکھنا یہ ہے کہ ایم ایل اے عمران حسین آکسیجن کہاں سے لے رہے ہیں ،کیونکہ گوردوار بھی اسے (آکسیجن کو) ضرورت مندوں میں بانٹ رہے ہیں۔ ہائی کورٹ نے کہا ہے کہ ممکنہ طور پر ممبرا اسمبلی فرید آباد سے آکسیجن لا رہے ہوں ۔ بنچ نے یہ بھی کہا ہے کہ اگر وہ دہلی کو الاٹ کئے گئے کوٹہ سے آکسیجن نہیں لے رہے ہیں ، اور ممبر اسمبلی خود سلنڈر کا بندوبست کرر ہے ہیں، تودرخواست گزارکوکوئی اعتراض نہیں ہوسکتا ۔ اس پر درخواست گزار ایڈووکیٹ کی جانب سے حسین کے ذریعہ آکسیجن تقسیم کا حوالہ دیتے ہوئے ایک فیس بک پوسٹ کا اسکرین شاٹ کی کاپی دکھاکر آکسیجن کی ذخیرہ اندوزی کا الزام عائد کیا۔ اس پر دہلی حکومت کی جانب سے سینئر ایڈووکیٹ راہل مہرہ نے ہائی کورٹ کو یقین دلایا کہ آکسیجن ، دوائی یا طبی آلات کی ذخیرہ اندوزی اور بلیک مارکیٹنگ میں ملوث تمام افراد کے خلاف سخت کارروائی کی جائے گی۔