ہندی اردوکی کشمکش اور دینی مدارس کے لیے اعتدال کی راہ!

اظہارالحق قاسمی بستوی
استاذ ومفتی مدرسہ عربیہ قرآنیہ، اٹاوہ، اترپردیش
izhar.azaan@gmail.com
ہندی اور اردو کا جھگڑا نیانہیں ہے، تقسیمِ وطن سے لے کر آج تک اردو پر یہ الزام عائد کیا جاتارہاہے کہ اردو بھارت کی زبان نہیں؛ بل کہ پاکستانیوں اورمسلمانوں کی زبان ہے،نیز یہ کہ اردو کا فروغ ملک کو تقسیم کی طرف ہی لے جائے گا،جس کا اظہار مختلف اوقات میں فرقہ پرست تنظیموں کی طرف سے کیا جاتارہاہے۔ اردو کے ساتھ تقسیم کا نام جڑ جانے کی وجہ سے ہمیشہ اس کے ساتھ تعصب برتاگیااور اردو کو ہمیشہ شک کی نگاہ سے دیکھا گیا؛ حالانکہ سچائی یہ ہے کہ اردو بھارت میں ہی پیداہوئی اور بھارت ہی میں پروان چڑھی اور آج بھارت میں ہی بوڑھی ہو رہی ہے۔
بھارتی پارلیمنٹ میں اکثریت کے ووٹ سے ہندی کو قومی زبان قرار دے دیے جانے کے بعد مولانا آزاد ؒ ، جو کہ اس وقت کے وزیر تعلیم تھے، نے ہندی کو قومی زبان تسلیم کرتے ہوئے کہاتھا: ”اب یہ سوال اٹھتاہی نہیں کہ پورے ملک کی زبان کون سی ہوگی؟ہندی کو جو جگہ ملنا تھی، وہ مل گئی۔اب ہر ہندوستانی کا فرض ہے کہ اس کے آگے سر جھکائے؛ لیکن اس کے ساتھ اردو کی جو جگہ ہے، وہ اسے ملنی چاہیے۔اردو ایک ایسی زبان ہے ،جو کثرت کے ساتھ بولی جاتی ہے ،نہ صرف شمال میں ؛بل کہ جنوب میں بھی‘‘۔(مظلوم اردو کی داستان غم، بحوالہ الجمعیۃ آزاد نمبر،صفحہ: 6، بتاریخ 4/دسمبر 1958)
مولانا آزاد کے ہندی کو قومی زبان ماننے کے برملا اعتراف کے باوجود اس وقت تعجب اور افسوس کی انتہا ہو جاتی ہے ،جب ہم یہ دیکھتے ہیں کہ ملک کے پہلے وزیر تعلیم پر بھی اردو کے سلسلے میں ایک غیر ملکی (بزعم دشمناں) زبان کی حمایت کا الزام عائد کیا گیا؛چناں چہ مولانافدا حسین صاحب مرحوم اپنی کتاب ”مظلوم اردو کی داستان غم صفحہ نمبر 13 ”پر رقم طراز ہیں:”سیٹھ گوبند داس (ایم پی) نے کہا:فرقہ پرست تو وہ لوگ ہیں ،جو ہندوستانی کلچر کے خلاف انگریزی یا اردو کی سرپرستی کرنا چاہتے ہیں۔درحقیقت انہی پر فرقہ پرستی کا الزام عائد کرنا چاہیے۔اردو ملک کی تقسیم کی بنیاد ہے اور اردو کی علاقائی حیثیت تسلیم کرلینا ایساہے ، جیسے انگلی دیکر پہونچا پکڑوالینا”۔(الجمعیۃ آزاد نمبر، صفحہ: 115)
ظاہر ہے کہ ہندی کے حامی جب مولاناآزاد جیسے مضبوط قائدکے سامنے اس طرح کی بات کہہ سکتے ہیں اور وہ بھی اُس وقت ،جب کہ آرایس ایس اور اس کی حامی تنظیمیں اس قدر مضبوط نہیں ہوئی تھیں، توپھر اِس وقت ، جب کہ ملک میں ا ن کی تہذیب و ثقافت کا بول بالا ہو چکاہے اور ملک کے چپے چپے پر انہی کی چھاپ لگتی جارہی ہے ،وہ ماحول میں لسانی زہرکیوں نہیں گھولیں گے؟اور ہندی کا راگ کیوں نہیں الاپیں گے؟
ہندی کوتھوپنے کی بھی کوشش کوئی نئی نہیں ہے۔ ہندو مہاسبھا نے اپنے چوالیسویں اجلاس منعقدہ بنارس ،بتاریخ 20 /فروری 1959 کو ہی ’’ہندی، ہندو، ہندوستان ‘‘کانعرہ دیتے ہوئے کہا تھا:”ہندی ہی ایک ایسی زبان ہے، جس کو ہم قومی حیثیت سے تسلیم کرتے ہیں‘‘۔ (حوالہ بالا، صفحہ:21)
اب گزشتہ کچھ زمانے سے مسلسل ایسی باتیں سامنے آرہی ہیں کہ بھارت کے مدارس میں اہلِ مدارس کو اپنا ذریعۂ تعلیم و ذریعۂ ریکارڈ صرف ہندی و انگریزی یا اردو کے ساتھ ہندی وانگریز ی کو بنالیناچاہیے۔ حکومت اپنے مدارس میں شاید عنقریب اس قانون کو نافذالعمل قرار دے دے۔ ہمارے اپنے حلقو ں سے بھی اسی طرح کی صداے باز گشت سنائی دے رہی ہے؛چناں چہ مدارس میں ہندی زبان کے فروغ کے حوالے سے 24 /جنوری 2019 کو سوشل میڈیاپردو اہم پوسٹیں نظر نواز ہوئیں۔ ایک علی گڑھ کے صاحب کی اور دوسری ہمارے استاذمحترم مولانا محمد برہان الدین قاسمی صاحب کی۔موصوف امام الدین صاحب علیگ نے کہا:
”اس وقت اردو کا جھنڈا اہل مدارس کے ہاتھوں میں ہے اور انہی کے کندھوں پر دین کی دعوت وتبلیغ کی ذمے داری بھی ہے،یہ دونوں کام ایک ساتھ دو ناؤ میں سواری کے جیسا ہے۔ اہلِ مدارس نے خود کو اردو کے خول میں بند کرکے اور اس کی حدبندی کو اپنے لیے لازم سمجھ کر بڑی غلطی کی ہے۔اسی کا نتیجہ ہے کہ اردو کے ساتھ علما کا دائرہ بھی دن بدن سکڑتاجارہاہے۔جب کہ اس کے برعکس مسلمانوں کی اکثریت اردو کو چھوڑ کر ہندی میں منتقل ہو چکی ہے۔ اس وقت اکثر مسلمان فارسی رسم الخط کے بجائے دیوناگری رسم الخط میں پڑھتے اور سمجھتے ہیں۔ہندو بھائی تو پہلے سے ہی مجموعی طور پر ہندی میں منتقل ہو چکے ہیں ،یہی وجہ ہے کہ علما اور اہلِ مدارس سماج سے مکمل طور پر کٹ چکے ہیں، جس کی وجہ سے دین کی دعوت کا کام بھی کافی حد تک متاثر ہواہے۔ضرورت اس بات کی ہے کہ ملک کے مدارس اردو ذریعۂ تعلیم اور فارسی رسم الخط کو چھوڑ کرہندی ذریعۂ تعلیم اور دیوناگری رسم الخط کو اپنائیں۔ یہ انتہائی حیرت کی بات ہے کہ ہندی کے اتنی بڑی زبان ہونے کے باوجود ہندی میڈیم کا کوئی ایک بھی مدرسہ موجود نہیں ہے،جب کہ آپ کو بنگالی، ملیالم اور دیگر کئی علاقائی زبانوں میں کئی مدرسے مل جائیں گے‘‘۔ (ایشیاٹائمز 24/1/19)
موصوف علیگ صاحب کے انداز گفتگوکی تصویب اورتمام باتوں کی تائید قطعانہیں کی جاسکتی ؛کیوں کہ ان کی کئی باتیں سچائی سے مطابقت نہیں رکھتیں؛ لیکن یہ امر واقعی ہے کہ اس وقت اردو کا جھنڈا اہل مدارس کے ہاتھوں میں ہے۔البتہ ہندی کے حوالے سے بھی اہل مدارس بالکل لاعلم و نابلدنہیں ہیں۔ محتاط اندازے کے مطابق شمالی ہند کے تقریبا پچاس فیصد مدرسوں کے طلبہ کو ہندی آتی ہے؛ لہذا موصوف کا یہ کہنا کہ ہندی میڈیم کا کوئی مدرسہ نہیں ہے ،یہ نرا بہتان ہے ؛کیوں کہ اہلِ مدارس کے کسی قدر ہندی جاننے کی وجہ سے اس طرح کے مدرسوں کی ضرورت محسوس نہیں کی گئی۔شمال کے مدرسوں کے اکثر اساتذہ و طلبہ کو کسی نہ کسی حد تک اور بعضوں کو تو بہت اچھی ہندی آتی ہے اور اس کی وجہ یہ ہے کہ شمالی ہند کے مدرسوں کے ماتحت چلنے والے پرائمری درجات اور مکاتب میں ہندی کی تعلیم لازمادی جاتی ہے۔ جہاں تک مہارت کا تعلق ہے ،تو یہ سچائی ہے کہ اکثر اہلِ مدارس اس سلسلے میں کم ہی ماہر ہوتے ہیں۔سماج سے کٹ جانے کا الزام بھی موصوف کی طرف سے علماپر زیادتی ہے؛ کیوں کہ عوام تحریرچاہے وہ کسی بھی زبان کی ہو، کم ہی پڑھتی ہے اور عوام سے علما کا عمومی رابطہ چونکہ اکثر گفتگو کے ذریعے ہوتاہے ؛اس لیے عوام علما سے اب تک جڑی ہوئی ہے۔ ہاں یہ بات ضرور ہے کہ بھاری بھرکم اردو بولنے والے علما کی زبان عوام کو کسی قدر کم سمجھ میں آتی ہے؛ لیکن پھربھی عوام علما سے کٹی نہیں ہے۔ البتہ موصوف کی اس بات سے قطعا انکار نہیں کیاجاسکتا کہ (شمال میں)مسلمانوں کی اکثر تعداد دیوناگری رسم الخط کو اردو کی بہ نسبت زیادہ سمجھتی ہے۔راقم الحروف جس علاقے میں خدمت کررہاہے ،وہاں کی عمومی صورتِ حال بھی یہی ہے کہ مسلم عوام کی اکثریت ہندی پڑھ اور سمجھ سکتی ہے، جب کہ اردو سے مناسبت کم ہی ہے،البتہ جنوب کے اہلِ مدارس ومسلمانوں کا نوے فیصد طبقہ ہندی توبالکل نہیں سمجھتا،مدارس والے صرف اردو ،جب کہ جدید تعلیم یافتہ مسلمان صرف انگریزی سمجھتے ہیں اور کچھ کچھ ہندی سمجھتے ہیں۔بہرحال محترم امام الدین صاحب کی نیت پر شک کرنے کا کوئی جواز نہیں ،ممکن ہے انھیں مدارس کے حوالے سے ان تفصیلات کا علم نہ ہو۔
آج یہ بات روز روشن کی طرح عیاں وبیاں ہے کہ درست اردو کی تعلیم کافی حدتک اب صرف مدرسوں میں رہ گئی ہے اور اگر میں یہ کہوں کہ یہ صرف مدارس اسلامیہ ہی ہیں، جن کا ذریعۂ تعلیم (میڈیم آف انسٹرکشن) مکمل طورپر اردو ہے ،تویہ سچ ہوگا ،اب عموماً اسکول کاذریعۂ تعلیم اردو نہیں ہے۔ دیگر تعلیم گاہوں میں کسی نہ کسی زبان کا تسلط اردو پر لازما پایاجاتاہے۔ جیسے یہی کہ اردو میڈیم اسکولوں میں پڑھانے والے اکثر اساتذہ اردو کی درست ابجد سے بھی واقف نہیں ہوتے۔حکومتوں نے بھی اردو میڈیم اسکولوں کا براحال دیکھ کر یاتو انھیں بند کر دیا یا انھیں ہندی میڈیم کے ساتھ ضم کردیا؛ لیکن المیہ یہ ہے کہ مدارس کی اردوکے تئیں اس بے لوث خدمت کے نتیجے میں انھیں اردو کی خدمت کرنے والا تک تسلیم نہیں کیا جاتا۔خود ساختہ اہلِ اردو مدارس والوں کی اردو خدمت کو یکسر نظر انداز کرتے رہے ہیں،جب کہ ہونا تو یہ چاہیے تھا کہ اردو کے حوالے سے اہل مدارس کی خدمات کے بقدر انھیں ان کے حقوق دیے جاتے،انھیں اعتبار کی نگا ہ سے دیکھا جاتا،ان کی اسناد کو نہ صرف کچھ جگہوں پر ؛بل کہ ملک کے تمام محکموں میں قابلِ اعتبار سمجھا جاتا؛لیکن ایسا کچھ بھی نہیں ہے۔ گو کہ یہ بات درست ہے کہ مدارس میں پڑھائی جانے والی اردو میں اردو ادب :جیسے شعر وشاعری، قصہ گوئی، ناول و افسانہ نگاری وغیرہ کے اصول واقعتا نہیں پڑھائے جاتے ؛ کیوں کہ ان میں کئی ایک اصنافِ سخن کو اہل مدارس درست نہیں سمجھتے اور اردو زبان کے سیکھنے اور جاننے کے لیے یہ فنون بنیادی طور پر ضروری بھی نہیں ہیں (حالاں کہ اگر اہل مدارس ان چیزوں کو جزئی طور پر ہی نصاب میں رکھ دیں، تو ان کے طلبہ کے لیے یہ فنون بائیں ہاتھ کا کھیل ہیں)لیکن صرف اس وجہ سے اہل مدارس کی اردو خدمت کا انکار ناانصافی ہے؛ کیوں کہ اہل مدارس کی جملہ تصنیفات اردو میں ہی ہوتی ہیں اور ان کی زبان کا معیار بھی اکثر انتہائی اعلی ہوتاہے۔
دوسری طرف اہل مدارس کو اردو کو ذریعۂ تعلیم بنانے اور ہندی کو اہمیت نہ دینے کے سبب تعلیم کے قومی دھارے سے کٹا ہوا سمجھا گیااور اردو کی خدمت کے باعث انھیں مشکوک نظروں سے دیکھا گیااور ہمیشہ انھیں انتہائی پڑھالکھا ہونے کے باوجود ان پڑھ اور گنوار سمجھا گیا۔ حکومت نے بھی ان کے جائز حقوق کے ساتھ ناانصافی کو روا رکھا، اردو اور مسلم دشمن خیمے میں مدارس کے خلاف نفرت کی بھٹی سلگائی جاتی رہی، جس کے من جملہ اسباب میں سے ایک سبب اردو کو لازم پکڑنا بھی رہاہے؛ حالاں کہ اگر اہل مدارس نے اردو کے ساتھ ہندی کو اپنا لیا ہوتا،تو شاید ان کے اوپر ہو رہی چھینٹاکشی میں کسی قدر کمی ضرور ہوتی۔
اس کا تیسرا پہلو یہ بھی رہا کہ مدارس سے نکلنے والے والے طلبہ کی اکثر یت اپنی معیاری قومی زبان سے ناواقف ہے اور اب تک اچھی طرح سے واقف نہ ہونے کی راہ چل رہی ہے، اس کی بنیادی وجہ اہل مدارس کا صرف اردو کو لازم پکڑنا ہے۔ اگر اردو کے ساتھ ہندی کو ہمارے مدارس میں وسعت دی جاتی ،تو بہت سے بہت صرف یہ نقصان ہوتاکہ اردو کیساتھ ساتھ ہندی بھی ہمارے مافی الضمیر کے اظہار کا ذریعہ ہوتی اورمجھے کہنے دیجیے کہ اردوقطعا اسلام کی زبان نہیں ہے،اسلام کے لیے اردو بھی تمام زبانوں کی طرح ایک زبان ہے،اسلام کی زبان صرف اور صرف عربی ہے۔ کیاایسا ہمارے اسی ملک میں نہیں ہوا ہے کہ پہلے اس ملک کی زبان فارسی بھی رہی ؛لیکن گزرتے وقت کے ساتھ فارسی دم توڑ گئی اور اردو نے اس کی جگہ لے لی اور اب ،جب کہ اردو کو لے کر چلنا نہ صرف مشکل ؛بل کہ بہت سارے نقصانات کا بھی ذریعہ ہو رہاہے ،تو کیوں نہ اردو کے ساتھ ہندی کو بھی اہل مدارس اختیار کریں اور ہندی کو اپنے اداروں میں مناسب جگہ دیں ،جیسا کہ مرکزالمعارف جیسے اداروں کے ذریعے انگریزی کو جگہ دی گئی، جس کے نتیجے میں آج سیکڑوں علما انگریزی زبان لکھنے اور بولنے پر قادر ہیں اور اس کے ذریعے مختلف جہات سے خدمات انجام دے رہے ہیں؛ لیکن ہندی کے حوالے سے اب تک کوئی مناسب پیش رفت نظرنہیں آتی۔
دوسری طرف ہمارے استاذاور معروف عالم دین حضرت مولانابرہان الدین صاحب (ڈائریکٹر مرکزالمعارف ممبئی و ایڈیٹر انگریزی ماہنامہ ایسٹرن کریسنٹ) نے بھی ہمارے دوست مفتی محمد طہ جونپوری کی ایک ہندی پوسٹ پر تبصرہ کرتے ہوئے لکھا: ”بہت اچھا!میں نے اس پوسٹ کو اپنے فیس بک وال پر بھی شیر کیا ہے، مزید ہندی کتابیں پڑھو،زبان بہتر ہو جائے گی۔بہتر ہے کہ صرف ہندی یا انگلش میں لکھو،یہی دونوں زبانیں اب ہمارے مخاطبین کی زبانیں ہیں اور ہمیں جلد سے جلد ان کی طر ف منتقل ہونے کی ضرورت ہے‘‘۔(ایم ایم ای آر سی المنی گروپ،نشر کردہ بتاریخ 24 جنوری 2019)
اس سے بھی اس بات کی تائید ہوتی ہے کہ اب ضرورت آن پڑی ہے کہ اہلِ مدارس ہندی کی تعلیم کے لیے سنجید ہ ہوں اور لازمی ہے کہ ہندی کافروغ اردو کی قربانی کی بساط پر نہ ہو؛کیوں کہ اہل مدارس کے لیے دونوں زبانیں ضروری ہیں۔ اردو تو اس لیے کہ وہ اس سے مانوس بھی ہیں اور پوراعلمی اور دینی ذخیرہ اسی میں موجود ہے اور اس لیے بھی کہ اردو صرف ایک زبان نہیں؛ بلکہ ایک ثقافت بھی ہے اوراس کی شیرینی من کو موہنے والی ہے اور ہندی اس لیے کہ حالات اور دعوتِ دین کا تقاضا ہے۔
اب سوال یہ ہے کہ اس کو عملی جامہ کیسے پہنایاجائے؟ تو اس کا جواب یہ ہے کہ ہرمدرسہ اپنے یہاں ہندی زبان کے سبجیکٹ کو باقاعد ہ طور شعبۂ عالمیت کے سال اول سے کم از کم سال پنجم تک رکھے اور پانچ سال میں گھنٹہ وائز کم از کم بارہویں تک کی ہندی پڑھائے،شعبۂ حفظ میں درجہ ہفتم تک کی ہندی سیکھنے کو لازم قرار دے، اپنی دیگر تعلیم کے لیے اردو کو چاہیں، توحسبِ معمول لازم پکڑیں اوراسی کو ذریعۂ تعلیم بنا کر رکھیں۔ میں قطعا اس بات کا حامی نہیں کہ اردو کو قربان کردیا جائے؛ لیکن مجھے محسوس ہورہاہے اور شاید میرے جیسے بہت سے لوگوں کو بھی کہ اربابِ مدارس کو اب ہندی کو بھی اردو کی طرح اپنا لینا چاہیے۔اس سے میرے خیال میں ان کا کوئی دینی نقصان نہیں ہوگا؛ بل کہ مدارس میں پڑھنے والے بچوں کے ساتھ ساتھ ملک میں رہنے والے دوسرے لوگوں کا بھی فائدہ ہی ہوگا۔ شاید ہندی کے حوالے سے اہل مدارس کے لیے یہی اعتدال کی راہ ہے۔ واضح رہے کہ ہندوستان ہمارا ملک ہے اور یہی ہم اہلِ مدارس کے لیے حقیقی میدانِ عمل بھی ہے، اگر واقعتاہم نے اس ملک میں رہنے کا فیصلہ کیا ہے اور اس کی تقدیربدلنا چاہتے ہیں، توہمیں اس سلسلے میں سوچنا ہوگااور ہندی کو اس کی مناسب جگہ دینی ہوگی۔

    Leave Your Comment

    Your email address will not be published.*