کہ تیرا وجود ہے کالعدم

تازہ ترین، سلسلہ 90
فضیل احمد ناصری
تری گفتگو میں حرم حرم، تری جستجو میں عجم عجم
ترے لب خدا کے سفیر ہیں، ترا دل ہے جلوہ گہِ صنم
تو ہی عصرِنو کا خلیل ہے، تو نوائے ربِ جلیل ہے
ابھی چھوڑ شیوۂ آزری، کہ بلا رہا ہے تجھے حرم
تو اگر ہے دین کا ہم نوا، تو صنم کدے کو نہ جا، نہ جا
کہ بلندتر ہے جہان میں، ترے سامنے لہبی عَلَم
اے فدائے حق! رہِ عشق میں، تری جان جائے تو غم نہ کر
نہ یہودیت، نہ مجوسیت، ترا دین سب سے ہے محترم
ترا نفس ہے ترا ہم نَفَس، اسے چھوڑ یوں ہی نہ بوالہوس!
تری تیغ کردے ابھی ابھی، تری خواہشات کا سر قلم
تجھے منزلوں کی ہے گر طلب، تو سفر کی سمت درست کر
تجھے کعبہ ملنا محال ہے، تو فرنگیوں کا ہے ہم قدم
نہ نماز ہے، نہ نیاز ہے، نہ شہیدِ راہِ حجاز ہے
تری روح اتنی ضعیف تر، کہ ترا وجود ہے کالعدم
تری غفلتیں، تری مستیاں، مجھے دے رہی ہیں اداسیاں
تو عجیب تر، میں غریب تر، تجھے اپنا غم، مجھے تیرا غم
تری بندگی، تری زندگی، تری زندگی، تری بندگی
یہی تیرا رنگِ حیات ہو، تو عروج پائے گا دم بہ دم

    Leave Your Comment

    Your email address will not be published.*