مرثیہ حضرت مولانا عبدالرشید بستویؒ

تازہ بہ تازہ، سلسلہ 95
فضیل احمد ناصری
موسمِ گل بوستاں سے ناگہاں رخصت ہوا
گلستاں سے عندلیبِ خوش بیاں رخصت ہوا
چھوڑ کر *معہد* کو روتا اٹھ گیا *عبدالرشید*
بزمِ علم و فن سے مردِ نکتہ داں رخصت ہوا
گلشنِ ہستی کو کہہ کر اک سلامِ آخری
یک بیک وہ صاحبِ شیریں زباں رخصت ہوا
دے کے اپنے چاہنے والوں کو اک داغِ فراق
پی کے وہ جامِ حیاتِ جاوداں رخصت ہوا
*بادہ خوارانِ رشیدی* کے ہوئے سینے فگار
مے کدے سے ساقئ تشنہ لباں رخصت ہوا
رہ رووں کو کون سکھلائے گا آدابِ سفر
کارواں کو چھوڑ میرِ کارواں رخصت ہوا
درسگاہیں غم کناں ، لوح و قلم ہیں سوگوار
آہ! کیوں کر عالمِ صد داستاں رخصت ہوا
سینۂ گیتی ہےظلمت سےحجاب اندر حجاب
آسماں سے *آفتابِ ضَو فشاں* رخصت ہوا
جسکی شانِ مومنانہ تھی سلف کی اک مثال
عالمِ فانی سے وہ *خلد آشیاں* رخصت ہوا

    Leave Your Comment

    Your email address will not be published.*