غزل

ایمن جنیدخان
روز اِتنا بَھگا رہی ہے تُو
زِندگی کِیوں تَھکا رہی ہے تُو
دُنیا وَالوں کو تو سَتایا تھا
اَب مُجھے بھی سَتا رہی ہے تُو
میں نے کب تُجھ سے مَانگا تاج محل
میرا دِل کیوں جَلا رہی ہے تُو
دِل ہے وِیران وقت حیراں ہے
دِن یہ کیسے دِکھا رہی ہے توُ
چاند رکھ کر کَسی کے دَامن میں
میرے تَارے چُرا رہی ہے تُو
دے کہ دنیا کے مُجھ کو رَنج و اَلم
دُور سے مُسکرا رہی ہے تُو
عِشق نے کم سَتایا ہے ایمن
میری ہَستی بھی کَھا رہی ہے تُو

    Leave Your Comment

    Your email address will not be published.*