غزل

احمدعطاء اللہ
ایک دن ساتھ گزاریں دونوں
عین ممکن ہے محبت ہو جائے
تجھ کو اچھا لگے ہلکا میٹھا
مجھ کو نمکین کی عادت ہو جائے
جھولیاں بھر لیں، ذخیرہ کرلیں
کیا خبر وصل کی قلت ہو جائے
آج کا وعدہ ابھی پورا کر
کل کو اعلان ِ قیامت ہو جائے
میں محبت کے لیے آیا تھا
تیری مرضی تھی کہ بیعت ہو جائے
کاش منزل نہ میسر آئے
کاش رستے میں شہادت ہو جائے

    Leave Your Comment

    Your email address will not be published.*